Merey Mutabiq Using Misleading Edits?

May 4th, 2010 | By | Category: Merey Mutabiq

Editing Merey MutabiqThe following paragraph comes from Kamran Shafi’s column in today’s Dawn:

I made the mistake of my life when I appeared, against better counsel, on Dr Shahid Masood’s Meray Mutabiq which was recorded and then edited. And by golly was it edited! Suffice it to say that I was shocked out of my wits, and greatly saddened, at the show as aired.

This is most interesting. Is Dr. Shahid Masood using editing to mislead his viewers and misrepresent his guests? This is always a danger with TV, and it’s hard to know what is real and what has been edited, especially with the advanced technology in today’s software. It would be interesting to know more about the situation here, and to get a glimpse “behind the curtain” at these TV programmes.

Tags: , , , ,

5 comments
Leave a comment »

  1. Jang Group VS Dr. Shahid Masood & ARY ONE World.
    http://chagataikhan.blogspot.com/2009/11/jang-group-vs-dr-shahid-masood-ary-one.html

    Dr Shahid Masood and Jang Group of Newspapers often pull popular stunt to gain cheap popularity.[that is why Dr Shahid often write Urdu Columns because human memory is weak] One wonder which version of Shahid Masood and Jang are to be trusted? the one who started his career in ARY ONE World – Views on News, the one who used to exploit Pakistanis on Meray Mutabiq on GEO TV, or the one who joined PTV and Prime Minister Secretariat as the Advisor to PM or the one who again joined Jang Group of Newspapers and GEO TV’s Meray Mutabiq [AIK BAR PHIR – ONCE AGAIN] ‘revealing’ that he is dismantled by the government, I wonder after so many somersaults [for earning quick bucks], does even the inept PPP Government need a Zionist Conspiracy to dismantle this comedian, Dr Shahid Masood? One wonders that when Dr Shahid Masood knew everything bad about Asif Ali Zardari & Co then why did he join the PPP Cabinet, he also accepted the post of MD PTV and then again quit PTV and that too when his pay package was discussed [read the news below filed by the side kick of Ansar Abbasi i.e. Muhammad Ahmad Noorani in The News]in National Assembly and Senate he filed this story in The News International about Ansar Abbasi and rejoined GEO TV again.

    ISLAMABAD: Senior anchor person and former MD PTV Dr Shahid Masood has said that he has been told by a federal minister that Ansar Abbasi, Editor Investigations, The News, was on the government hit list and once he is “dismantled” the next target will be Shaheen Sehbai, the Group Editor of the newspaper. Dr Shahid explained that he was clearly told by a PPP government federal minister that he (Dr Shahid) has already been ‘dismantled.’ “Ansar Abbasi is being dismantled right now while Shaheen Sehbai will be dismantled in the near future,” he said. REFERENCE:Minister reveals media-bashing plans of government, says Dr Shahid By Muhammad Ahmad Noorani Wednesday, December 31, 2008

    According to Dr Shahid Masood, the minister told him that first he (Dr Shahid) had been ‘dismantled’ successfully. “Now a character assassination campaign against the Editor Investigations, The News Ansar Abbasi is under way, and after completely dismantling him (Ansar) a similar campaign will be launched against Group Editor, The News, Shaheen Sehbai. REFERENCE: Minister reveals media-bashing plans of government, says Dr Shahid By Muhammad Ahmad Nooran Wednesday, December 31, 2008

    BUT THE SAME GEO TV/JANG GROUP/THE NEWS INTERNATIONAL’S CHIEF CORRESPONDENT KAMRAN KHAN DENY ITS OWN NEWS BY REFUTING DR. SHAHID MASOOD’S CLAIM IN AN EPISODE OF GEO TV “JAWABDEH” – WATCH AS TO HOW KAMRAN KHAN EXPOSED DR. SHAHID MASOOD IN THE VIDEO.

    Dr. Shahid Masood is ‘bad mouthing’ everybody from Musharraf to Zardari but would you like to watch him in this video with Musharraf and Dr Ishratul Ibad???? Dr Shahid Masood in the company of Relaxed General Musharraf and Governor Sindh Ishratul Ibad and that too after Dr Shahid Masood joined Pakistan Television Corporation on the orders of President Zardari:

    Musharraf and Shahid Masood Freindship

    Mr. Ansar Abbasi’s sidekick in The News International i.e. Mr. Muhammad Ahmad Noorani had also filed this story today i.e. Sunday, November 22, 2009, and he is feeling very bad about ARY ONE WORLD’S FOUNDER OWNER Haji Abdul Razzaq of ARY TV INVOLVEMENT IN CORRUTPION and NRO. One thing is forgotten by Mr Muhammad Ahmad Noorani that Dr. Shahid Masood [GEO TV] was once affiliated with ARY One World, as its senior executive director and was the chief of ARY One World conducting the show Views On News on ARY.

    “QUOTE”

    ISLAMABAD: It might be shameful for the whole media community of Pakistan which is continuously fighting against dictatorial rules and its by-products like the National Reconciliation Ordinance (NRO), one of the cronies of top man sitting at the capital hill top, Haji Abdul Razzaq of ARY TV, is also among the beneficiaries of the atrocious and notorious NRO ordinance. According to documents available with The News, in the scam of plundering of billions of rupees of the Muslim Commercial Bank (MCB), cases of buddies of the top man – Hussain Lawai and Haji Abdul Razzaq – were closed under the NRO after four months of the promulgation of the notorious law. Both the cases against Lawai and Haji Razzaq were criminal in nature and thus were closed/disposed of by the Special Court (Offences in Banks) on August 19, 2008, on the recommendation of a federal review board which was given on June 26, 2008.

    It is highly criminal on the part of the State Bank of Pakistan (SBP) that by defying all the rules and regulation it first gave a green signal to Hussain Lawai to be appointed as CEO of Arif Habib Bank, and now the central bank is in the process of bestowing My Bank upon the person involved in MCB plunder scam. The SBP spokesman was not available to record his version despite repeated calls made on his cell phone. A federal review board, consisting of Justice (R) Hamid Ali Mirza, Justice (R) Malik Muhammad Qayyum and Justice (R) Agha Rafiq Ahmad Khan, declared that FIR No 5/97 (Case No 12/97) and FIR No 6/97 (Case No 14/97) were politically motivated and thus the board recommend that the cases should be withdrawn. On this recommendation the concerned court acted swiftly and took no time in terminating the cases. According to the apex court judgment and legal interpretation these cases will be reopened on November 28, 2009, and both Lawai and Haji Razzaq will be liable to arrest. REFERENCE: MCB plunder scam By Muhammad Ahmad Noorani – ARY chief, Lawai were ‘cleansed’ under NRO Sunday, November 22, 2009

    HUMAN MEMORY IS WEAK BUT FIRST AWARD SHOULD BE GIVEN TO JANG GROUP AND ITS CORRESPONDETNS BECAUSE THE SAME MUHAMMAD AHMAD NOORANI HAD FILED THIS NEWS AGAINST DR. SHAHID MASOOD WHEN HE JOINED THE PPP GOVERNMENT. ALL IS FORGOTTEN NOW BECAUSE NOW DR. SHAHID MASOOD IS IN GEO TV.

    ISLAMABAD: The Establishment Division on Monday issued an ambiguous notification explaining the package and remunerations of the newly-appointed chairman-cum-managing director of the state-owned Pakistan Television Corporation (PTV). The letter of the Establishment Division bearing No 1/64/2008-E-6, dated June 30, 2008, says that besides the fixed remuneration of the new chairman PTV, any other “financial benefits” are negotiable between Dr Shahid Masood and “competent authority” at some later stage. The Establishment Division letter read: “Dr Shahid Masood, chairman PTV, who also has the additional charge of managing director, has agreed to receive the same remuneration package which was given to former MD PTV Yousuf Baig Mirza (annexure-III).” The contract of Dr Shahid Masood will be for a period of five years which could be terminated by either side on a six-month notice. The attached document (annexure-III) issued by the Establishment Division on May 25, 2007, said that MD PTV Yousuf Baig Mirza would get Rs 700,000 per month as salary. His house rent would be Rs 150,000 and utility allowances Rs 25,000. The salary would be raised by Rs 50,000 per annum. Free mobile phone, two residence telephones and one fax would be allowed. Business class tickets would be given for the national and international travels. Recreational allowance would be given according to the situation. The notification issued by the Establishment Division on Monday said Dr Shahid Masood would be paid Rs 50,000 extra to that of the package of the previous MD as he (Dr Shahid) would also hold the office of the PTV chairman. REFERENCE: Package of PTV chairman announced By Muhammad Ahmad Noorani Tuesday, July 01, 2008

    Information minister Sherry Rehman has also approved the Establishment Division notification. However, senior PTV officials see the point of “extra financial benefits to be negotiated later” with concern. The officials maintained that it would be totally against the rules of the corporation and illegal to offer somebody any percentage of the income from any programme aired on the PTV. Dr Shahid Masood was appointed as the PTV chairman through the Establishment Division letter No 1/64/2008-E-6, dated May 31, 2008, and was given the additional charge of the MD through the letter No 1/64/2008-E-6, dated June 21, 2008. REFERENCE: Package of PTV chairman announced By Muhammad Ahmad Noorani Tuesday, July 01, 2008

    IF THAT WAS NOT ENOUGH MR. MUHAMMAD AHMAD NOORANI AND JANG GROUP STRIKE AGAIN AND THAT TOO WHEN DR SHAHID MASOOD JOINED GEO TV

    ISLAMABAD: Senior anchor person and former MD PTV Dr Shahid Masood has said that he has been told by a federal minister that Ansar Abbasi, Editor Investigations, The News, was on the government hit list and once he is “dismantled” the next target will be Shaheen Sehbai, the Group Editor of the newspaper. Dr Shahid explained that he was clearly told by a PPP government federal minister that he (Dr Shahid) has already been ‘dismantled.’ “Ansar Abbasi is being dismantled right now while Shaheen Sehbai will be dismantled in the near future,” he said. Dr Shahid Masood told The News that the message was conveyed to him in the last 48 hours through a federal minister. Shahid said that the minister was not threatening him directly but was conveying a message. “The establishment has decided to do this dismantling of senior journalists of the country (all incidentally belonging to the Jang Group of newspapers),” Dr Shahid quoted the federal minister as saying. Dr Shahid said that everything was being done by the government but the minister used the word “establishment”. It is important to mention here that the term establishment is generally used for the military authorities and intelligence agencies. According to Dr Shahid Masood, the minister told him that first he (Dr Shahid) had been ‘dismantled’ successfully. “Now a character assassination campaign against the Editor Investigations, The News Ansar Abbasi is under way, and after completely dismantling him (Ansar) a similar campaign will be launched against Group Editor, The News, Shaheen Sehbai. REFERENCE: Minister reveals media-bashing plans of government, says Dr Shahid By Muhammad Ahmad Nooran Wednesday, December 31, 2008

    Dr Shahid, who hosts the Geo News programme “Meray Mutabiq,” which is recorded in Dubai, recently resigned as the chairman/MD PTV and as special assistant to the prime minister. Dr Shahid told this scribe that he responded to the minister by saying that it was unfortunate that the secret funds of the information ministry are being misused by bribing some mercenary journalists. Dr Shahid said that he told the minister that during his stay in a government department and later in government the use of this secret fund was confirmed. “However, it is very unfortunate that the secret fund of the information ministry, which was first used to bribe journalists to get support for government policies, is now being used to tarnish the image of some leading and independent journalists for the first time in the country’s history.” Dr Shahid said that he made it clear to the federal minister that government’s policy to tarnish the image of independent journalists by bribing other journalists through secret funds of the information ministry is going to fail and it will ultimately tarnish the image of politicians, democracy and the country. REFERENCE: Minister reveals media-bashing plans of government, says Dr Shahid By Muhammad Ahmad Nooran Wednesday, December 31, 2008

    Despite all the above yet the Editor of The News International, Mr Shaheen Sehbai has the audacity to file this canard line in his bi-line “story” in The News. Shame on you Mr Shaheen!

    “QUOTE”

    Days after his meetings at the Nadra, an important journalist of the official news agency APP started calling TV anchors and media persons on behalf of Brig Imtiaz and each time he handed over the phone to the brigadier who wanted himself on the screens. Many anchors have gone on record to say the brigadier was too eager and ready to spills the beans. One anchor wrote that the brigadier said he wanted to explode a “political nuclear bomb”. That he was going to spill the beans against his own self was irrelevant and unimportant but this time he was trying to compensate the PPP for ‘Midnight Jackals’ against Benazir Bhutto. The part of the plot to attack the media is yet to be implemented as the operation is not yet over. politicians, he said that he himself (Kaira) was the biggest cell. REFERENCE: The return of the Daylight Jackals By Shaheen Sehbai with reporting from Mazhar Tufail and Ahmed Noorani Friday, September 04, 2009

    Mr. Shaheen Shebai [Former Correspondent of Daily Dawn Pakistan, Former Editor of The News International, Ex Director News of ARY ONE TV Channel, Former Director of GEO News Network, and presently Group Editor, The News International, Jang Group of Newspapers, Pakistan] I hope you remember the background of Mr Shahin Sehbai [One of the Editor of The News International and earlier he was in Dawn], he had escaped from Pakistan [to save himself from the wrath of the Establishment headed by General Musharraf and Co particularly after the Controversy of Shaheen Sehbai’s Story on the Murder of Daniel Pearl after the start of War on Terror] and Mr Shaheen used to run a Web Based News Service i.e. South Asia Tribune but suddenly Mr Shaheen Sehbai reappeared and closed his website [whereas Mr Shaheen during his self imposed exile in USA used to raise hue and cry against the Military Establishment that he and his family member’s life is in danger] he returned to Pakistan and that too under the same Martial Law of General Musharraf and joined ARY TV Channel then GEO and then The News International [where he is presently working].

  2. Notice served on former PTV chief Shahid Masood By Khawar Ghumman Wednesday, 02 Jun, 2010 http://www.dawn.com/wps/wcm/connect/dawn-content-library/dawn/the-newspaper/local/islamabad/recovery-of-rs5.1m-notice-served-on-former-ptv-chief-260

    ISLAMABAD: The Pakistan Television Corporation has served legal notice on its former chief Dr Shahid Masood for recovery of Rs5.1 million which he had to pay as per his contract before leaving the organisation.

    Acting Secretary Information and Broadcasting Mansoor Sohail informed the Public Accounts Committee (PAC) on Tuesday that on May 27 the PTVC had sent the legal notice to the former PTV managing director, who also held the additional charge of its chairmanship for some time. The issue came before the PAC when it was scrutinising the ministry’s audit report for the year 2008-09.

    The cabinet secretariat vide its notification dated June 21, 2008, appointed Dr Shahid Masood as managing director of PTVC with the additional charge of chairmanship. He assumed the charge on the same date. As per appointment letter dated June 27, 2008, his contract period was five years and in case of early termination of the contract a notice of six months was required from either side or gross salary in lieu thereof. The gross salary of the officer was fixed at Rs850,000 per month.

    Dr Masood tendered resignation which was accepted by the prime minister with effect from November 3, 2008. The officer did not serve the notice of six months and, therefore, was liable to pay the gross salary amounting to Rs5.1 million in lieu of the notice period. The irregularity was reported to the management on April 2, 2009, and to the ministry on June 1, 2009.

    PAC Chairman Chaudhry Nisar Ali said when it came to public money no favour should be done to anybody; therefore, the committee backed PTVC’s decision to serve legal notice on Dr Masood.

    Commenting on the overall working of the information ministry, the PAC chairman said the ministry was keeping its various operations secret which over the years had cast shadow over its affairs. Accepting that the ministry during PML-N’s two terms in power also remained involved in such activities, Mr Nisar called for a serious re-examining of its working. “Until this day, I am unable to understand why the ministry keeps a secret fund,” he said, warning that next time the PAC would like to know each and every penny spent by the ministry.

    PTV FOUNDATION: The PAC directed the secretary information, who is also chairman of the PTV, to wind up its foundation whose affairs over the years had gone from bad to worse.

    Mr Sohail informed the committee that since taking over the charge of the ministry, he had a couple of meetings with the foundation’s board of directors and found it was not a viable option. In response, the PAC chairman said the committee also recommended the same and was willing to extend help to the PTV administration.

    The PTV board of directors in its meeting held on August 28, 2001, had approved incorporation of the PTV foundation. As per its charter, the foundation was established to carry on the business of advertising, publishing, film making, drama production to establish, operate studios, theatres and other institutions for the promotion of science, art and culture. So far the foundation has consumed Rs30 million loaned money but failed to start even a single project.

    INQUIRY: The PAC also directed the secretary information to hold an inquiry into reported complaints against Radio Pakistan boss, Murtaza Solangi.

  3. انصاف ملنے تک لڑتی رہوں گی‘
    وقتِ اشاعت: Saturday, 10 September, 2005, 07:46 GMT 12:46 PST http://www.bbc.co.uk/urdu/miscellaneous/story/2005/09/050909_shazia_text_nisar.shtml

    ڈاکٹر شازیہ انصاف کی متمنی ہیں

    ڈاکٹر شازیہ خالد نے بی بی سی کو جو انٹرویو دیا اس میں سوال جواب کے دوران انہوں نے اپنے ساتھ ہونے والے واقعے کے حوالے سے کئی باتیں بتائیں۔ان کے شوہر خالد نے بھی کئی سوالوں کے جواب دیئے۔ انٹرویو کے شروع میں ڈاکٹر شازیہ نے اپنے اوپرگزرنے والے حالات کے بعد کی صورتِ حال کا جواب کچھ یوں دیا:
    ڈاکٹر شازیہ خالد: انسیڈنٹ کے بعد میں اٹھی، میری حالت خراب تھی اور مجھے کچھ سمجھ میں نہیں آ رہا تھا کہ یہ میرے ساتھ کیا ہو رہا ہے۔ میری ڈریسنگ ٹیبل پہ چابی رکھی ہوئی تھی وہ چابی میں نے اٹھائی۔ باہر جو دروازہ تھا وہ باہرہی سے بند کیا گیا تھا۔ اس پہ تالا لگا ہوا تھا۔ کھڑکی سے میں نے ہاتھ ڈال کر باہر کی طرف تالا کھولا اور شال لے کر میں نرسنگ ہوسٹل چلی گئی۔ وہاں سسٹر سکینہ کے شوہر نے دروازہ کھولا۔ سسٹر سکینہ مجھ سے ملیں اور مجھ سے پوچھنے لگیں کہ کیا ہوا تمہارے ساتھ۔ میں نے انہیں بتایا کہ میرے ساتھ یہ واقعہ پیش آیا ہے اور اس بندے نے- – – -، چار گھنٹے وہ میرے کمرے میں رہا۔ مجھے مارا، مجھے پیٹا۔‘

    ’میری بہت حالت خراب تھی۔ میرے سر سے خون نکل رہا تھا۔ مجھے ٹیلیفون کے ریسیور سے مارا گیا۔ میں ریسیور اٹھانا چاہ رہی تھی کہ کسی کو مدد کے لیے پکاروں۔ اس نے میرے سر پہ ریسیور دے مارا اور ٹی ٹی پسٹل سی مجھے دھمکیاں دینے لگا اور کہا اگر تم شور کروگی تو باہر ایک آدمی کھڑا ہے جس کا نام امجد ہے وہ تمہیں- – – – – اس کے ہاتھ میں مٹی کا تیل ہے- – – – – میں جلا دوں گا خاموش رہو‘۔

    ’میری حالت بہت خراب تھی میرے ہاتھ سوجے ہوئے تھے، رسٹ میں ٹیلیفون کی تاریں بندھی ہوئی تھیں، میری آنکھوں پر پٹی باندھ دی گئی تھی۔ تو جب میں نرسنگ ہوسٹل گئی تو میری حالت ایسی تھی۔ سسٹر سکینہ بھی رونے لگی، وہ صدمے میں آگئی کہ کیا ہوا تمہارے ساتھ۔ میں نے بتایا کہ یہ ہوا ہے میرے ساتھ۔ لیکن میں نے اسے زیادتی کا نہیں بتایا کہ میرے ساتھ کیا ہوا ہے۔‘

    ’لیکن میں نے اسے یہ بتایا ہے کہ میرے پیسے میری جیولری (چھین لی گئی ہے)، مجھے اس نے مارا مجھے پیٹا، مجھے دھمکیاں دینے لگا۔ سب میں نے اسے بتایا۔ اس وقت میں سسٹر سکینہ کے کمرے میں ہی تھی۔ اس نے سینیئر کو کال کیا۔ سینیئرز آئے، ایم ڈی، مینیجر آئے، فیلڈ کے مینیجر، پرویز جمولہ آئے، سلیم اللہ آئے اور ڈاکٹر محمد علی آئے سی ایم اور عثمان وادوہ آئے۔ مجھ سے پوچھنے لگے کہ آپ کے ساتھ کیا ہوا ہے۔میں نے ان کو بتایا تو انہوں نے کہا کہ ہمیں پتہ ہے کہ تمہارے ساتھ کیا واقعہ پیش آیا ہے۔ ہم تمہارے کمرے میں گئے تھے۔ تو وہاں سے ہمیں ایویڈینس ملے ہیں۔ لیکن تم خاموش رہو، تم کسی سے کوئی ذکر نہیں کرنا اور صرف تم یہ کہنا کہ میرے ہاں ڈاکہ پڑا ہے۔ اور کچھ بھی نہیں ہوا۔‘

    سوال: کیا آپ سے یہ بات ایم ڈی نے کہی تھی؟

    جواب: نہیں مینیجر تھے، پرویز جمولہ اور سی ایم او ڈاکٹر عثمان وادوہ، سلیم اللہ، یہ تینوں تھے۔ تو اس وقت میری حالت ایسی تھی کے کچھ سمجھ میں ہی نہیں آ رہا تھا کہ میرے ساتھ یہ کیا ہوا ہے۔ میں اکیلی عورت تھی وہاں۔ میں نے ان سے کہا کہ میرے بھائی کو بھابھی کو کال کریں میں ان سے ملنا چاہتی ہوں، میں ان سے بات کرنا چاہتی ہوں۔ تو کہنے لگے کہ نہیں ہم ان کو کانٹیک نہیں کر سکتے اور ناں ہی ہم انہیں بلاسکتے ہیں۔ انہوں نے مجھے انجیکشن بھی لگائے تاکہ میں پولیس کو بیان بھی نہ دے سکوں۔ مجھے کہا گیا کہ اب پولیس آئے گی اور مجھے خاموش رہنا ہے۔ تم نے کچھ بھی نہیں کہنا، تمہاری عزت کا سوال ہے۔ آپ پڑی لکھی عورت ہو بدنام ہو جاؤ گی اور ہماری کمپنی کے امیج کا بھی سوال ہے۔ مجھے تو انجکشن دیتے رہے۔ میں نیم خوابیدہ تھی۔ پولیس آئی لیکن میں بالکل ڈراؤزی تھی میری سمجھ میں ہی نہیں آ رہا تھا اور پولیس ایسے ہی چلی گئی واپس۔ ڈاکٹر ارشاد اینیستھیٹک ہیں۔ انہوں نے مجھے انجکشن لگائے۔ میں ان سے کہتی رہی کہ کیوں انجکشن لگا رہے ہیں؟ ایک بار آپ مجھے انجیکشن دے چکے ہیں، دو بار مجھے ایسیسڈیٹو دے چکے ہیں، تو کہنے لگے کہ سی ایم او کے آرڈر ہیں کے میں آپ کو انجکشن لگاتا رہوں۔

    سوال: سی ایم او معنی
    جواب: سی ایم مینز چیف میڈیکل آفیسر، پی پی ایل کے ہیں۔

    سوال: آپ کو کیا لگتا ہے انہوں نے ایسا کیوں کیا؟

    جواب: وہ شاید اپنی کمپنی کا امیج خراب نہیں کرنا چاہتے تھے۔ وہ یہ سمجھتے کہ اگر یہ دنیا کو پتہ چل گیا کہ ایک لیڈی ڈاکٹر کے ساتھ ایسا واقعہ ان کی کمپنی میں پیش آیا ہے تو اس کے بعد کوئی لیڈی ڈاکٹر، کوئی عورت، ان کے یہاں کام کرنے کی راضی نہیں ہو گی۔تو وہ یہی چاہتے تھے کہ بات ڈھکی چھپی رہے۔ کسی کو پتہ ہی نہیں چلے۔

    ’ان کو پتہ تھا کہ بلوچستان میں ایسے زیادتی کے واقعے کی بات بہت کم ہوتی ہیں۔ اور جب پی پی ایل والوں کو پتہ ہے کہ ان کی جو فیلڈ ہے وہ بہت ہی سیکیور ہے اور ہر جگہ پر، موڑ پر ان کے ڈی ایس جی گارڈز، جو ڈیفنس سیکیوریٹی گارڈز ہوتے ہیں وہ کھڑے ہوتے ہیں۔ ان کے علاوہ کوئی بھی بندہ اگر ہسپتال میں آتا ہے تو اسے لازماً اسے اپنی شناخت دکھانی پڑتی ہے۔ ایسا کوئی بندہ تو پی پی ایل کے ہسپتال میں داخل نہیں ہو سکتا۔ اور جس طرح سے یہ واقعہ پیش آیا ہے- – – – وہ بندہ رات کو آیا اور صبح سویرے گیا ہے۔ بغیر کسی ڈر کے، خوف کے، وہ اتنی دیر تک کمرے میں رہا ہے، ٹی وی بھی دیکھتا رہا۔ ٹی وی میں اس نے جیو چینلز، دیکھا، بی بی سی دیکھا اور سی این این دیکھا۔ انگلش چینیلز وہ دیکھتا رہا ہے اور بالکل اونچی آواز میں، مطلب اس کو کوئی ڈر نہیں تھا۔

    سوال: آپ کا شک کس کی طرف ہے؟

    جواب: میں اس ملزم کی شکل دیکھ نہیں پائی کیونکہ کمرے میں اندھیرا تھا اور مجھے بلائینڈ فولڈ کر دیا تھا۔ میں کچھ نہیں کہ سکتی کہ وہ کون تھا۔ لیکن جو بھی تھا تو وہ کوئی طاقتور بندہ ہو گا۔ اس کے ہاتھ بہت لمبے ہونگے، اس کی پہنچ بہت دور تک ہو گی۔اور حکومت کی طرف سے تفتیش جو بتاتی ہے اور ابھی تک وہ پکڑا نہیں گیا تو اس کا مطلب ہے کہ وہ کلپرٹ عام آدمی نہیں ہے۔

    سوال: یہ جو ٹریبیونل ہے انہوں نے آپ کو دوائیاں بھی دی تھیں۔ آپ کو لگتا ہے کہ یہ ریپ میں شریک تھے۔ پی پی ایل کےافسران نے اس آدمی کی کیا مدد کی تھی۔

    جواب: بس پی پی ایل والے چاہ رہے تھے کہ کسی کو پتہ ناں چلے اور جب مجھے ایسیڈیٹو دینے لگے تو مجھے نیکسٹ ڈے مجھے جو سی ایم او ہیں ڈاکٹر عثمان باجوہ۔ انہوں نے مجھ کہا کہ یہاں سے مجھے شفٹ کر رہے کراچی اور ہم آپ کو ڈائیرکٹ یہاں سوئی سے، سوئی کی فلائیٹ سے نہیں لے جائیں گے۔

    ’وہ کہنے لگے ہم آپ کو بالکل سیکیور لے جائیں گیں تاکہ کسی کو بھی پتہ ناں چلے کہ آپ یہاں سے جا رہی ہیں۔ ایمبولنس میں پہلے ہم آپ کو کہکول لے کر جائیں گے اور لوگوں کو یہی پتہ چلے گا کہ اس میں کوئی پیشنٹ جا رہا ہے۔ پھر انہوں نے مجھے سٹریچر پر بالکل لٹا دیا گیا تاکہ لوگوں کو یہ پتہ چلے کہ اس میں کوئی مریض جا رہا ہے۔ جب میں ایمبولنس میں بیٹھی تو ڈاکٹر ارشاد میرے ساتھ تھے، اینیستھیٹک ڈاکٹر ہیں جو۔ ان کی بیگم بھی میرے ساتھ تھیں تو انہوں نے مجھے بتایا کہ کسی کو ہم نے نہیں بتایا کہ اس میں آپ جا رہی ہیں۔ اور ہم نے بالکل سیکیور رکھا ہے تاکہ کسی کو پتہ بھی ناں چلے۔ اور جب ہم کراچی پہنچیں گے تو وہاس ڈاکٹر امجد اور ڈاکٹر خورشید آپ کو لینے کے لیےآئیں گے اور وہ پھر آپ کو ہسپتال لے کر جائیں گے۔

    سوال: انہوں نے آپ کو فوراً بلوچستان سے کراچی کیوں بھیج دیا؟

    جواب: میں تین دن وہاں رہی، سیکنڈ کو یہ واقع پیش آیا۔ تین دن میں وہاں رہی اور شام مجھے وہاس سے شفٹ کیا گیا۔ اور جو میرا جوڑا پہنا ہوا تھا انسیڈینٹ کے وقت، وہیں انہوں نے وہ جوڑا غائب کروا دیا تھا۔ انہوں سے سارے میرے ایویڈنسز غائب کروا دئیے گئے۔ پولیس جب کراچی میں ہمارے پاس آئی ملنے کے لئیے تو پولیس نے خود کہا کہ آپ کا کمرہ کسی نے سیل نہیں کیا اور آپ کے کمرے سے ہمیں کوئی فنگر پرنٹس نہیں ملےاور آپ کے ایویڈنس بھی پی پی ایل والوں نے غائب کروا دئیے۔ تو ہمیں کوئی ثبوت نہیں ملا آپ کے کمرے سے۔

    ’ٹریبیونل کی جو فائنڈنگز آئیں ہیں اس میں ہمیں، رزلٹ بھی ہمیں بتایا گیا تھا۔ لیکن جب ہم یو کے میں پہنچے تو ہیومن رائٹس کے لوگوں نے ہمیں دی۔ وہ 35 صفحوں کی انکوئری رپورٹ ہے۔ اس میں یہ لکھا ہے کہ ایس ایچ او اور پولیس نے پی پی ایل کے ڈاکٹرز کو وارننگ دی تھی کہ ڈاکٹر شازیہ کو بغیر کسی سٹیٹمنٹ کے کراچی شفٹ نہیں کر سکتے۔ اور ان کو بہت سختی سے بھی کہا تھا لیکن اس وقت پی پی ایل کے جو ڈاکٹرز تھے، جو مینیجمنٹ تھی انہوں نے کسی بھی قسم کا پولیس کے ساتھ کوئی رابطہ نہیں رکھا۔ یعنی وہ پولیس کو معاملے میں شامل ہی نہیں کرنا چاہتے تھے۔ اب جیسے مجھ پر سی ایم او نے الزام لگایا ہے کہ وہ خود نہیں چاہ رہی تھی کہ پولیس کو سٹیٹمنٹ دے اور پولیس کے چکروں میں پڑے، لیکن انہوں نے تو خود زبردستی اس سے (مجھ سے)سٹیٹمنٹ سائن کروائے تھے کہ میں ایف آئی آر نہیں کٹوانا چاہتی اور میں پولیس میں بیان نہیں دینا چاہتی۔ میرے ساتھ صرف ’روبری‘ ہوئی ہے اور کچھ نہیں ہوا۔

    سوال: اس وقت جب انہوں نے بیان سائن کراوئے تھے تو آپ بے ہوش تھی؟
    جواب: انکونشنس نہیں تھی، میں ایسیڈیٹو مجھے دیا تھا، ڈراؤزی تھی میں اور مجھے دھمکیاں دینے لگے۔ آپ اگر ایف آئی آر کٹواؤ گی تو آپ کو دھکے کھانے پڑیں گے۔ آپ کو جیکب آباد جانا پڑے گا اور سبی جانا پڑے گا، در در کی آپ کو ٹھوکریں کھانیں پڑیں گی۔

    سوال: یہ سب کس نہ کہا آپ سے؟

    جواب: یہ سی ایم او نے کہا اور جب میں سائن نہیں کر رہی تھی تو غصے سے انہوں نے مجھے کہا کہ جلدی سائن کرو تمہارے ہاتھوں میں لگ جائے گی ہتھکڑی اور میرے ہاتھوں میں بھی ہتھکڑی لگ جائے گی۔ جلدی سے اس پر سائن کرو۔ میں اکیلی عورت وہاں کیا کرتی میں بے بس تھی۔

    سوال: یہ کون سی تاریخ کو ہوا، اسی دن انہوں نے سائن کروائے کہ اگلے دن؟

    جواب: اسی دن انہوں نے مجھ سے سائن کروائے۔

    سوال: کیپٹن حماد کا نام پہلے کب آیا۔

    جواب: کیپٹن حماد کا نام ہم نے میڈیا میں سنا تھا۔

    سوال: شروع کے دنوں میں جب آپ نے پی پی ایل آفیسرز کو واقعے کے بارے میں بتایا تھا تب کیپٹن حماد کا نام سامنے نہیں آرہا تھا۔

    جواب: نہیں، جب میں سوئی میں تھی تو میں نے اس کا نام نہیں سنا لیکن جب میں کراچی آئی تو اس کا نام ہم نے سنا تھا۔

    سوال: میڈیا کے تھرو
    جواب: جی میڈیا کے تھرو۔

    سوال:کیا اس سلسلے میں ایک خاکروب نے بھی گواہی دی تھی؟

    جواب: جی، جب ہم کراچی میں تھے تو پولیس ہمارے پاس آئی تھی۔ ڈی آئی جی آئے تھے ان کے ساتھ ایس ایس پی تھے۔ مجھ سے غلط قسم کے سوالات کرنے لگے۔ ڈی آئی جی نے مجھ سے یہ پوچھا کہ 25000 آپ کے پاس کہاں سے آئے، کس نے آپ کو دئیے اور اتنی جیولری جو آپ کے پاس تھی وہ آپ کہاں سے لے کر آئے۔ کیوں آپ نے اپنے پاس رکھی۔ کن موقعوں پر آپ پہنتی تھی۔ اور اس نے کہا کہ سویپر کا یہ بیان ہے کے کسی ایک دن میرے کمرے سے ایک وٹنس ملا ہے۔ کونڈم ملا ہے جو اس نے فلش کر دیا ہے۔اب آپ مجھے یہ بتائیں وہ سویپر ان پڑھ بندہ جس کو اپنی عمر یاد نہیں ہو گی۔ اس کو وہ وقت وہ ٹائم کیسے یاد آ گیا کہ اسے میرے کمرے سے یہ ایویڈنس ملا۔

    ’جب پولیس کو کوئی سراغ نہیں ملا اور کسی ہائی پریشر کی وجہ سے ملزم پکڑ نہیں پائے تو مجھ ہی پر الزام ٹھہرانے کی کوشش کی۔ عورتوں کے ساتھ تو ہمیشہ یہی ہوتا آیا ہے۔ عورت پر ہی لوگ انگلی اٹھاتے ہیں۔ اسی کو ہی بدنام کر دیتے ہیں۔

    سوال:یہ بھی کہا گیا ہے کہ شازیہ کے لئے کچھ لوگوں نے دو ایسے شاہدین سے بیان لئیے ہیں کہ وہ ماڈرن کپڑے پہنتی تھی۔

    ڈاکٹر شازیہ: اگر پاکستانی ماڈرن کپڑے شلوار قمیض اور دوپٹہ کہلاتے ہیں تو میں ماڈرن ہوں۔ اس کا مطلب ہے کہ پاکستان کی ساری عورتیں موڈرن ہیں۔

    سوال: آپ کا کیا ری ایکشن تھا جب آپ نے سنا کہ پریزیڈنٹ(جنرل پرویز مشرف) صاحب نے یہ کہا ہے کہ کیپٹن حماد سو فیصد بے قصور ہے۔

    جواب: ہم کیا کرتے۔ ہمیں جب پاکستان کے صدر نے ہی کہ دیا کہ وہ بے قصور ہے اور وہ بھی میری آئڈنٹیفیکیشن پریڈ سے پہلے۔ اور کیپٹن حماد کے ٹربیونل سے پہلے انہوں نے یہ اناؤنس کر دیا کہ وہ بے قصور ہے۔

    سوال: کیا اس وقت ری ایکشن تھا آپ کا۔

    جواب: ہم تو شروع سے چاہتے تھے کہ ہم کیس کریں، میڈیا میں آئیں تاکہ لوگوں کو پتہ چل سکے کہ میرے ساتھ کیا ہوا ہے اور ٹریبیونل کے لیے ہم کوئٹہ جانا چاہتے تھے۔

    دیکھیں انہوں نے اپنی ایجینسیز کی رپورٹ پر کہہ دیا ہو گا کہ وہ بے قصور ہے لیکن ایک جگہ پہ انہوں یہ بھی کہا ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کے کیس میں ان کو بہت کچھ پتہ ہے۔ لیکن اگر وہ اپنی بات فاش کریں گے تو ڈاکٹر شازیہ کی جان کو خطرہ ہے۔ اس کا مطلب ان کوپتہ تھا کہ ملزم کون ہے۔ مگر ٹھیک ہے اگر وہ چیف سسپکٹ نہیں ہے کوئی اور ہے تو ان کو پتہ ہے وہ کون ہے کیوں نہیں بتاتے۔

    جب میری شناخت پریڈ ہوئی تھی تو شناخت پریڈ کے دوران ملٹری انٹیلیجنس کا ایک میجر آیا۔ اس نے کہا کہ جی آپ کی جانوں کو خطرہ ہے آپ ملک سے نکل جائیں تو اچھا ہے آپ کے لیے اور ہم آپ کو خوشخبری سنائیں گے آپ ملک سے باہر جہاں بھی جائیں گے تو ہم آپ کو خوشخبری سنائیں گے کہ ملزم پکڑا گیا ہے۔ ہمیں پتہ ہے، ایم آئی اے کے لوگوں کو پتہ ہے۔ یہ ٹربیونلز یہ پولیس انوسٹیگیشنز آپ ان کو چھوڑ دیں، یہ سب ہمارے اوپر ہے، ہم جانتے ہیں کہ اصل مجرم کون ہے۔وہ کہہ رہے ہیں کہ ان کو پتہ ہے۔اب جب ایم آئی اے کے لوگ کہہ رہے ہیں۔ وہ کور کمنانڈر کا پیغام لے کر آیا تھا میجر۔

    سوال: کون سا کور کمانڈر
    مسٹر خالد: نام نہیں بتایا۔ لیکن انہوں نہ کہا کہ میں بلوچستان سے آیا ہوں۔

    سوال: اس نے آپ کو اپنا کارڈ دکھایا تھا، ایم آئی سے ہی تھا۔

    جواب: وہاں ایس ایس پی جو تھا وہاں پہ، جج تھا جو ساتھ بیٹھا ہوا تھا۔ ان سے بھی وہ ملا تھا، ان سے بھی وہ باتیں کر رہا تھا۔ ہمیں اس نے کچھ نہیں بتایا کہ وہ ایم آئی کا آدمی تھا۔ میجر نے بتایا کہ دو طرح کے پیغام ہیں اس کے پاس، بلوچستان سے کچھ لوگ مارنا چاہ رہے ہیں آپ کو، کراچی میں گھوم رہے ہیں ہتھیاروں کے ساتھ، اس لیے آپ کی جان کو خطرہ ہے، ملک سے باہر چلے جائیں اور دوسرا یہ کہ جو کلپرٹ ہے اس کے بارے میں ہم جانتے ہیں۔ پولیس نہیں جانتی۔

    سوال: اچھا یہ بھی بات ہو ئی تھی کہ آپ کے جو گرینڈفادر ہیں انہوں نے لوگوں کواکٹھا کیا ہے شازیہ کو کاری کرنے کے لیے۔

    مسٹر خالد: جی اس طرح کی بات ہوئی تھی، میرے والد اور میری والدہ۔ جو میری سٹیپ مدر ہیں وہ تو اس کے حق میں نہیں تھیں لیکن میرے جو دادا ہیں وہ ایک فیوڈل ذہن کے انسان ہیں۔ انہوں نے کچھ لوگوں کو اکٹھا کیا تھا۔جو میری والدہ نے ہمیں خبر پہنچائی تھی اور دوسری شرط یہ رکھی تھی کہ شازیہ کو طلاق دے دیں تاکہ یہ ہماری عزت کا سوال ہے۔

    سوال: تو آپ کو کیسے محسوس ہوا؟
    ڈاکٹر خالد: مجھے بہت حیرت ہوئی تھی اور میں نے کہا کہ کس طرح کی وہ باتیں کر رہے ہیں۔ انہیں یہ نہیں پتہ کہ شازیہ بے قصور ہے، وہ کیا کر سکتی ہے۔ میں نے کافی سٹینڈ لیا تھا اس بات پر۔

    سوال: آپ اس وقت سعودی عرب میں تھے؟
    جواب: مسٹر خالد: نہیں میں اس وقت لیبیا میں تھا۔

    سوال: اور اس وقت آپ کی نوکری تھی۔
    مسٹر خالد: میں جاب کر رہا تھا۔

    سوال: اب وہ چھوڑ کر آئے ہیں یہاں آپ؟
    مسٹر خالد: جی میری جاب چلی گئی ہے کیونکہ میں شازیہ کو اکیلا نہیں چھوڑ سکتا اس وقت۔

    سوال: ارینجڈ شادی تھی آپ کی؟
    جواب: مسٹر خالد: ارینجڈ بھی تھی اور اپنی مرضی بھی۔

    سوال: آپ کب پہنچے؟
    مسٹر خالد: مجھے شازیہ کی سسٹر ان لا نے ای میل کیا تھا اور اس کے بعد میں نے اس سے بھی فون پر بات کی۔ گیارہ تاریخ کو میں کراچی پہنچا کیونکہ میری جہاں جاب تھی وہ علاقہ سہارا ڈیزرٹ کہلاتا ہے۔ ایک ہفتہ مجھے یہاں لگ گیا تھا آنے میں۔

    سوال: یہ بتائیں کہ آپ کا اب کوئی کانفیڈنس ہے۔ یہ ٹریبیونل کی انکوائری ختم ہو گئی ہے۔

    جواب: ٹربیونل نے تو اپنی فائنڈنگز دے دی۔ جب ہم اسلام آباد میں تھے تو ٹریبیونل اناؤنس ہوا تھا۔تو ہم چاہتے تھے کہ ٹربیونل کی فائنڈنگز ہمیں ملیں تو ہم کیس کریں لیکن ہمیں فائنڈنگز کا کچھ پتہ نہیں چلا۔ جب ہم یہاں پہنچے تو کچھ ایک مہینہ پہلے ہیومن رائٹس کی طرف سے ہمیں یہ رپورٹ ملی ہے تو اب میں چاہتی ہوں کہ میں کیس کروں۔ میں چاہتی ہوں کہ میرے کیس کی انکوائری ایماندار پولیس افسر اور جج کریں اور کسی کے بہکاوےمیں نہ آئیں۔اللہ کا شکر ہے کہ ہمارے ملک میں ایسے لوگ موجود ہیں جن کے ہاتھوں میں قانون محفوظ ہے۔

    سوال: آپ نے کہا کہ آپ گھر میں نظر بند تھیں۔کس کس کو اجازت تھی کہ آپ سے مل سکے؟

    جواب: جب ہم اسلام آباد میں تھے تو ہمیں کسی سے بھی ملنے کی اجازت نہیں تھی۔

    سوال: اسلام آباد میں آپ کون سی تاریخ کو تھے؟

    جواب: ہم پانچ مارچ کو کراچی سےاسلام آباد پہنچے اور ہمیں تھریٹ کیا گیا۔ آپ اپنے موبائل بالکل بند رکھیں۔ کسی سے ملنے جلنے کی کوئی ضرورت نہیں۔ اور اب آپ فیڈرل حکومت کے ہاتھوں میں آ گئے ہو اور ایجنسیز والے بڑے ظالم ہیں اور باہر بیٹھے ہوئے ہیں ہتھیاروں سمیت۔ اور جو ہم کہیں وہ آپ کو کرنا ہو گا۔ آپ بالکل خاموش ہو جاؤ۔

    مسٹر خالد: اصل میں دیکھیں کہ جب ہم کراچی سے اسلام آباد آئے تو ہمارا سب لوگوں سے رابطہ نہیں ہونے دیا گیا۔ اس وقت ہمیں پتہ چلا کہ ٹریبیونل کی فائنڈنگز آنے والی ہیں اور خود بلوچستان حکومت نے جو انوسٹیگیشن کروائی تھی اس کا پتہ چلنے والا تھا۔ جب ہم نے جج سے یہ کہا کہ شازیہ کہ سٹیٹمنٹ کی کاپی ہمیں دے دیں تو اس نے کہا کہ اس کی ایک کاپی گورنر بلوچستان کے پاس جائے گی اور دوسری کاپی اس کی پریزیڈنٹ کے پاس جائے گی۔

    سوال: آپ ٹریبیونل کےسامنے پیش کیوں نہیں ہوئی تھیں؟
    جواب: ٹریبیونل کی سٹیٹمنٹ جب میں نے دی تھی تو وہاس صرف ایک جسٹس تھے اور وکیل تھا ایک اور ایک ٹائپسٹ تھا۔ جب ہمیں ٹربیونل کے لیے بتایا گیا کہ آپ کو کوئٹہ جانا ہے تو ہم نے کراچی کے سی ایس اسلم سنجرانی کو بتایا کہ ہم جانا چاہیں گے تو انہوں نہ کہا کہ آپ کی جان کو خطرہ ہے اور بلوچستان کے حالات بہت خراب ہیں۔ آپ کا ٹریبیونل یہیں کراچی میں ہو گا۔ اپلیکیشن میں لکھا گیا کہ میری طبیعت خراب ہے۔اسی لیے میں کوئٹہ نہیں جانا چاہتی۔ اور اگر آپ پھر بھی جانا چاہتے ہیں تو آپ اپنی زندگی کے خود ذمہ دار ہونگے۔

    سوال: اور یہ ملٹری کے لوگ تھے یا پولیس کے؟
    جواب: یہ چیف سیکریٹری تھے اسلم سنجرانی سندھ کے۔ انہوں نے ہم سے کہا تھا۔

    مسٹر خالد: لیکن جب ہمیں یہ اطلاع ملی کہ آپ کا ٹریبیونل ہم کراچی میں کریں گے تو اس وقت ہمیں ایک خط ملا بلوچستان حکومت سے کہ سندھ ہائی کورٹ میں شازیہ کا ٹریبیونل ہوگا۔ اور پولس کے ساتھ شازیہ جائیں گی۔ لیکن دس منٹ پہلے پولیس کو ہٹا کے رینجرز جیپ لے کر آ گئے۔ وہ ہمیں لینے آ گئے اور ہم یہ سوچ رہے تھے کہ سندھ ہائی کورٹ جائیں گے وہاں جج ہو گا۔ کھلی عدالت ہو گی۔ لیکن پتہ چلا ہمیں تو الیکشن آفس میں لے گئے۔ یہ خفیہ طور سے تحقیقات کرنے کا مطلب کیا ہوا۔

    ’یہ کیس بہت ہی حساس قسم کا کیس تھا۔ پاکستان گورنمنٹ کے لیے اور میں جہاں تک سمجھتا ہوں کہ جو شکوک اور شبہات آرمی کے اوپر آئے تھے، آرمی کے کیپٹن کے اوپر آئے تھے۔ جیسے نواب اکبر بگٹی نے کہا تھا کہ وہی کلپرٹ ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ وہ جو فوج اور قبائلیوں کے درمیان چپکلش ہو گئی تھی اس میں ایک انا کا مسئلہ بھی تھا گورنمنٹ آف پاکستان کے لیے۔

    سوال: آپ کو لگتا ہے کہ آپ میں ہمت تھی ان کا سامنا کرنے کی کیونکہ ہم نے ایک اور بھی کیس دیکھا ہے مختار مائی کا؟

    جواب: جی بالکل ہم تو چاہتے تھے کہ ہم میڈیا کے سامنے آئیں، اپنا کیس میڈیا کے سامنے لائیں لیکن پھر ہمیں ہاؤس اریسٹ کر دیا گیا۔ہمیں شروع سے یہ کہا گیا، حکومت نے ہم سے کہا کہ آپ لوگ خاموش رہیں۔ ہم آپ کو انصاف دلوائیں گے۔ ہمیں انہوں نے فریب اور مکاری سے ملک سے باہر نکال دیا۔ اور اب وہی لوگ میرے کیس کو ختم کر دینا چاہتے ہیں۔ تو میں صرف اپنے لیے نہیں بول رہی ہوں بلکہ پاکستان کی تمام عورتوں کے لیے میں حق اور انصاف کی آواز اٹھائی ہے اور میں تب تک لڑتی رہوں گی جب تک ہم عورتوں کو پاکستان میں انصاف نہیں ملتا۔

    سوال: کیا ’وہ لوگ‘ سے مطلب حکومت ہے؟
    جواب: جی بالکل۔

    سوال: آپ کو لگتا ہے گورنمنٹ ٹارگٹ کرتی ہے عورتوں کو؟

    جواب: جی بالکل، ہمیں تو انہوں نے یہ ہی کہا کہ آپ کو انصاف ملے گا۔ ہم خاموش بیٹھے تھے، جب گورنمنٹ ہی ہمیں خود کہہ رہی ہے، قانون نافذ کرنے والے ہمیں کہہ رہے ہیں کے آپ کو انصاف ملے گا۔ لیکن جب ہم یہاں پہنچے تو نیوز آن لائن والوں کی طرف سے ہمیں یہ اخبار میں رپورٹ ملی کہ ہمارے یو کے جانے سے پہلے میں نے ٹیلیفون پر بات کی ہے بگٹی صاحب سے اور میں نے ان سے رو کے التجا کی ہے کہ خدارا میری عزت کو مت اچھالیں۔ اور میں اپنی مرضی سے پاکستان چھوڑ کر جا رہی ہوں۔ حکومت نے مجھے انصاف دیا ہے خدارا آپ خاموش ہو جائیں اور حکومت نے مجھے ایک لاکھ ڈالر بھی دیے ہے۔ لیکن آج تک میں نے ان سے ٹیلیفون پر بات نہیں کی۔ یہ ساری جھوٹی خبریں ہیں جو نیوز آن لائن والوں نے دی ہیں تاکہ لوگوں میں یہ تاثر پھیلے کہ ڈاکٹر شازیہ ایک ٹھاٹھ باٹھ کی زندگی گزار رہی ہیں جیسا کے ابھی کچھ دن پہلے اخبار میں آیا تھا کہ شازیہ کو یو کے کی شہریت مل چکی ہے اور یو کے گورنمنٹ ان کو دو ہزار پاؤنڈ ماہانہ دے رہی ہے اور ان کے ہیزبینڈ کو بہت جلد جاب ملنے والی ہے۔ ایسی کوئی بات نہیں۔ ہم یہاں خانہ بدوشوں کی طرح زندگی گزار رہے ہیں۔ در در کی ٹھوکر کھا رہے ہیں۔ پاکستان میں تھے تو اپنے گھر سے نکالے گئے، وہاں سے نکلے تو ہمیں ایک اولڈ بلوچ گھر میں رکھا گیا۔ وہاں سے نکالے گئے تو ہمیں اسلام آباد میں رکھا۔ پھر جب ہماری ساری امیدیں ختم ہوگئیں تو خود کیس فائل کیا اور یہاں عام پناہ گاہ میں رہ رہے تھے۔ اب کچھ دن پہلے اس گھر میں شفٹ ہوئے ہیں۔ ہمارا سارا مستقبل ختم ہو گیا۔ میں اپنے بچے سے دور ہوگئی۔

    سوال: واپس جانا چاہتی ہیں؟

    جواب: وقت اور حالات کیا صورت اختیار کرتے ہیں مجھے تو نہیں پتہ اور میں جو پناہ کی طالب بن کر زندگی گزار رہی ہوں اس کا مجھے کوئی شوق ہی نہیں ہے۔ لیکن مجبوری یہ ہے کہ حکومت ہمیں پروٹیکشن نہیں دے سکی۔ لیکن امید رکھتی ہوں کہ اگر وقت اور حالات نے ساتھ دیا تو ضرور جاؤں گی۔

    سوال: اگر حکومت بدلی تو جائیں گی؟
    جواب: جی بالکل جانا چاہوں گی۔

    سوال: آپ کی بے نظیر صاحبہ سے بھی ملاقات ہوئی تھی۔ کیا ان سے باتیں ہوئیں اور کیا انہوں آپ کو سپورٹ کیا۔؟

    جواب: جی انہوں نے مجھے سپورٹ کیا اور کہا کہ آپ نے بہت اچھا کیا اپنے حق اور انصاف کے لیے لڑ رہی ہیں، اپنے لیے نہیں بلکہ پاکستان کی تمام عورتوں کے لیے آپ لڑ رہی ہیں، بہت اچھا کام کر رہی ہیں آپ۔

    سوال: آپ کہ رہی ہیں کہ آپ کا بیٹا بھی وہیں پر ہے۔ اپنے بیٹے کے بارے میں کچھ بتائیں۔
    جواب: میرا یہ بیٹا لے کر پالا ہوا ہے ۔ جب چار سال کا تھا تو اس کے والد کی وفات ہوگئی تھی تو اس کی امی نے دوسری شادی کر لی تھی۔تب سے میں ہی اس کی دیکھ بھال کر رہی ہوں۔ لیکن مجھے ڈر لگ رہا ہے کیونکہ جب ہم اسلام آباد میں تھے تو وہ لوگ کہہ رہے تھے کے یہاں آپ کا بیٹا بھی ہے اور آپ تو چلے جائیں گے ہم کچھ بھی کر سکتے ہیں۔

    سوال: یہ کس نے کہا تھا آپ کو؟

    جواب: یہ نیوز آن لائن کے جو ڈائریکٹر ہیں محسن بیگ، انہوں نے کہا تھا۔

    سوال: آپ کا جو بیٹا ہے اس کو انہوں نے آپ کو لے جانے نہیں دیا کہ آپ خود اس کو وہاں چھوڑ کر آئے ہیں۔

    جواب: جب ہم کراچی میں تھے تو ڈاکٹر شاہد مسعود اے آر وائی کے اور محسن بیگ ہمارے پاس ملنے کے لیے آئے تو شاہد مسعود نے کہا کہ محسن بیگ حکومت کا بندہ ہے۔ ہم آپ کی مدد کریں گے۔ آپ کی جانوں کو خطرہ ہے۔

    سوال: جانوں کا خطرہ کس سے ہے؟

    جواب: کہنے لگے کہ اسلام آباد کی ایجنسیز سے ہم ملے ہیں تو آپ لوگوں کو بہت رسک ہے اور بلوچستان کے حالات آپ کی اشو کی وجہ بہت خراب ہو گئے ہیں۔

    مسٹر خالد: ہم سے ملنے سے پہلے وہ اسلام آباد گئے تھے۔ محسن تو وہ ظاہری بات ہے کہ وہ ایجنسی کا بندہ ہی ہے اور شاہد مسعود نے بھی اس کا اقرار کیا۔ اس نے مجھے کہا تھا کہ محسن بیگ گورنمنٹ کا آدمی ہے۔ میں (شاہد مسعود) اور محسن آپ کی مدد کریں گے۔ اب گورنمنٹ شاہد مسعود اور محسن بیگ کے درمیان جو کھچڑی پک رہی تھی اس کا ہمیں تو علم نہیں۔ شاہد مسعود ہم سے اسلام آباد میں انٹرویو لینے کے بعد غائب ہو گیا تھا۔ پھر دوبئی سے اس نے فون کیا تھا۔ بڑا ڈرا ہوا تھا اور ایجنسیز کے لئیے اس نے کافی بری طرح سے باتیں کی تھیں کہ وہ تو ’مجھے ہی مار دینا چاہتے تھے اور میں اپنی جان بچا کے چار ائیرپورٹس سے اپنے ٹکٹ بک کرواکے اور جان بچا کے نکلا ہوں‘۔ پھر اس کے بعد محسن صاحب آ کے کھڑے ہو گئے جی شاہد مسعود صاحب کو ہم نے فرنٹ پہ رکھا ہوا تھا۔ سارا کام اور آپکا ویزہ وغیرہ تو ہمارا کام ہے، وہ تو ہم نے کیا ہے۔ پریزیڈنٹ سے بھی میں آپ کو اجازت دلوا رہا ہوں اور طارق عزیز جو سپیشل ایڈوائزر ہیں ان سے بھی اس نے ملاقات کروائی لیکن اس نے کہا تھا کہ- – – –

    سوال: طارق عزیز سے ملے؟
    جواب: مسٹر خالد: جی ان سے ملاقات ہوئی۔

    سوال: انہوں نہ کیا کہا تھا آپ سے؟

    مسٹر خالد: طارق عزیز سے جو ملاقات ہوئی تھی اس سے پہلے محسن بیگ صاحب نے ہمیں کہا تھا کہ آپ طارق عزیز صحاب کو کچھ نہ کہیں، آپ ان کی باتیں سنیں۔ میں نے کہا ٹھیک ہے۔ اور پھر ان سے ملاقات ہوئی انہوں نہ کہا کہ آپ نے تو بہت اچھا کیا ہے اور آپ کی سٹیٹمنٹ جو خود ہی انہوں تیار کی تھی اسی سٹیٹمنٹ کی بات کی۔

    سوال: سٹیٹمنٹ میں کیا لکھا ہوا تھا؟

    مسٹر خالد: سٹیٹمنٹ میں کچھ ایسی چیزیں تھیں جس طرح سے پی پی ایل کو بچایا گیا تھا کہ پی پی ایل نے شازیہ کو ٹریٹمنٹ دیا تھا، میڈیکل سپورٹ دی تھی۔ ایسی کوئی بات نہیں، دنیا کو پتہ ہے کہ پی پی ایل نے کیا رویہ اختیار کیا وہ تو آن ریکارڈ ہے، پولیس کے ریکارڈ سے آپ دیکھ لیں کہ انہوں نے کوئی تعاون پولیس کے ساتھ بھی نہیں کیا۔ تو وہ تو جھوٹ نہیں بول رہے۔ اور سینٹ میں بھی اس چیز کو اچھالا گیا ہے۔ ایم ڈی کو بلایا گیا ہے۔ بلکہ ٹریبیونل میں جو انکی یکطرفہ رپورٹس ہیں ان میں بھی یہ بتایا گیا ہے کہ پی پی ایل کی یہ ذمہ داری ہے۔

    سوال: سٹیٹمنٹ میں یہ لکھا ہوا تھا کہ شازیہ کو پی پی ایل نے بڑی اچھی طرح سے ٹریٹ کیا۔

    مسٹر خالد: جی

    سوال: اور یہ وہ خود لکھ کے لائے ہوئے تھے؟

    مسٹر خالد: جی لکھ کے لائے ہوئے تھے۔

    ڈاکٹر شازیہ: اور ا س میں یہ بھی لکھا ہوا تھا کہ میں اپنی مرضی سے ملک چھوڑ کے جا رہی ہوں اور حکومت نے میرا بہت ساتھ دیا ہے۔ تو میں نے کہا کہ میں اس سٹیٹمنٹ پہ سائن نہیں کروں گی۔ تو محسن بیگ نے کہا کہ اگر تم سائن نہیں کرو گی تو ایجنسیز والے یہ کہتے کہ اگر ہم خالی کاغذ پر لکیریں بھی ڈالیں تب بھی آپ اس پر – – – -سائن کرکے یہاں سے اپنی جان بچاؤ اور بھاگو۔

    سوال: اس میٹنگ میں جب آپ طارق عزیز سے ملے تھے تو آپ تھیں آپ کے خاوند تھے،محسن بیگ تھے اور طارق عزیز تھے بس۔ (تاہم محسن بیگ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اس بات کی تردید کی ہے کہ انہوں نے ڈاکٹر شازیہ کی ملاقات طارق عزیز سے کروائی تھی)۔

    مسٹر خالد: نہیں شازیہ کی جو بھابھی تھی وہ ان کے ساتھ تھی، تو طارق عزیز کو بھی ہم نہ کہا تھا کہ عدنان کو وہ ہمارے بیٹے جیسا ہے ہم اس کو لے جانا چاہتے ہیں تو انہوں نے کہا کہ جی آپ اس وقت چلے جائیں آپ کے پاس وقت بہت کم ہے۔ آپ یو کے جائیں اور اس کے بعد محسن وغیرہ بھی ہیں ہم آپ لوگوں کی مدد کریں گے اور عدنان بھی آپ کو آ کر مل لے گا۔

    سوال: پاسپورٹ آپ کے کس پاس تھے؟

    مسٹر خالد: پاسپورٹ ہمارے شاہد مسعود کے پاس تھے اور جب اس کو انہوں نے نکال دیا تو اس نے پاسپورٹ جو تھے کسی دوست کو دئیے تھے اور ان کا دوست ہمارے پاس تقریباً رات ایک بجے آیا تھا اور پاسپورٹ ہمیں دے کر چلا گیا۔

    سوال: ویزہ کس نے لگوایا تھا۔
    جواب: دونوں نے۔ شاہد مسعود نے
    مسٹر خالد: شاہد مسعود نے، محسن بیگ نے لگوایا ہے۔ اب کس نے لگوایا ہے ہمیں نہیں پتہ اس بات کا۔
    ڈاکٹر شازیہ: دو دن میں وہ ہمارا پاسپورٹ لے کر گئے اور دو دن میں واپس کر دئیے۔ تو دو دن میں ویزا کون لگوا سکتا ہے۔

    شیخ رشید صاحب کا بیان آیا تھا کہ ہم نے نہیں بھیجا اور کوئی این جی او ہے جس نے یہاں ان لوگوں کو بلوایا ہے۔

    مسٹر خالد: شیخ رشید کا بیان اس طرح آیا تھا کہ ہمیں تو پتہ ہی نہیں ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کیسے فلائی کر گئیں اور ہم نے امیگریشن سے پتہ کروایا کہ اس طرح کا کوئی بندہ نہیں گیا۔

    سوال: ایک اخبار نے ایک فائنڈنگ کی تھی اور آپ کی تصویر آئی تھی ائیرپورٹ پر۔ وہ ائیرپورٹ پر ہی کھینچی گئی تھی، اس کے پیچھے جو صوفہ تھا وہ تو کہیں نہیں پایا گیا۔

    جواب: نہیں جب مجھ سے سٹیٹمنٹ لی گئی تھی اسلام آباد میں اس وقت میرے فوٹوز نکالے تھے انہوں نے۔

    مسٹر خالد: اس وقت گیسٹ ہاؤس میں فوٹو لئیے تھے۔ اچھا شیخ رشید صاحب کی بات کریں کیونکہ وہ تو اس طرح کی باتیں کر رہے ہیں کہ ہمیں جی پتہ نہیں ہے اور این جی اوز نے بھیجی ہیں۔ اس کے بعد ہیومن رائٹس اور این جی اوز نے اس باتوں کی تردید کی تھی۔ اب یہ بتائیں کہ حلومت اس طرح کے جھوٹ کب تک بولتی رہے گی۔

    سوال: آپ کی کسی این جی اوز نے مدد نہیں کی تھی۔

    مسٹر خالد: کسی این جی اوز نے نہیں۔ جب ہم طارق عزیز سے مل کر جا رہے ہیں اور ان سے اجازت لے کر جا رہے ہیں تو سمجھیں کہ بات تو ختم ہو گئی۔ ہم سمجھ رہے تھے جیسے کے صدر سے مل کے جا رہے تھے۔

    اس وقت جو حالات تھے ہم خود گھبرائے ہوئے تھے اور ہمیں ڈرایا جا رہا تھا۔ اور محسن بیگ اس طرح کی باتیں کرتے تھے اور کہتے تھے یہاں سے نکل جائیں آپ کی زندگی بچ جائے گی۔

    سوال: آپ وہاں سے جانا چاہتے تھے۔
    جواب: ذاتی طور پہ ہم نہیں نکلنا چاہتے تھے لیکن حالات جو ہو گئے تھے تو ہم مجبور ہو گئے کہ ہم نکلیں۔اس اشو اتنا پولیٹیسائز کیا جا رہا تھا اور انصاف تو مل ہی نہیں پا رہا تھا۔ ایم آئی کے کرنل مجھے ملے تھے، کرنل حفاظت صاحب ملے تھے انہوں نے کہا کہ 48 گھنٹوں کے اندر آپ کو ایک بندہ ملے گا۔ کلپرٹ ملے گا۔ ایم آئی کے جنرل نے کہا کہ وہ میرے ہاتھ میں ہے۔

    سوال: جس دن ٹریبیونل بیٹھا تھا رپورٹ یہ آئی کہ سب سے پہلے ایم آئی کے لوگ آپ سے وہاں ملے تھے۔ یہ بات سچ ہے؟

    مسٹر خالد: نہیں ایم آئی کے کرنل مجھے گیارہ جنوری کو ہی ملے تھے۔

    سوال: یہ جو شناخت پریڈ ہوئی تھی تو اخباروں میں تو یہ آیا تھا کہ وہ لوگ نہیں دکھائے گئے تھے صرف ان کی آڈیو اور ویڈیو دکھائی گئی تھی۔

    جواب: نہیں آئڈنٹیفیکیشن پریڈ میں گیارہ بندے سامنے لے کر آئے تھے تو میں نے کہا کہ شکل تو میں پہچان ہی نہیں پاؤں گی لیکن آواز جو ہے میں وہ پہچان پاؤں گی۔ کبھی نہیں بھول سکتی مرتے دم تک اس بندے کی۔

    سوال: کیپٹن حماد اس پریڈ میں تھے۔
    جواب: مجھے بتایا تو نہیں گیا کہ اس میں کیپٹن حماد ہے۔ آج تک ناں تو کسی نے مجھے اس کی فوٹو دکھائی اور ناں ہی اس کی وڈیو۔ مجھے نہیں پتہ کہ اس میں کیپٹن حماد تھا کہ نہیں تھا۔ جو لوگ بلائے گئے تھے وہ ایک ایک کر کے پردے کے پیچھے سے ایک منٹ تک بولتے رہے لیکن ان میں سے کسی کو میں شناخت نہیں کر پائی۔ جب آئڈنٹیفیکیشن پریڈ ہو رہی تھی تب وہ گیارہ لوگ شیشے کے پیچھے کھڑے ہوئے تھے۔ لیکن میں نے کہا کہ ان کی شکل تو میں نہیں پہچان پاؤں گی اور آواز جو ہے وہ میں کبھی بھی نہیں بھول سکتی۔

    خالد: اگر اس آئڈنٹیفیکشن پریڈ میں کیپٹن حماد تھا اور اس نے ڈاکٹر شازیہ سے بات کی ہے تو وہ بالکل بے قصور ہے۔ کیونکہ جن لوگوں نے بات کی تھی کلپرٹ ان میں نہیں تھا۔

    سوال: آئڈنٹیفیکیشن پریڈ جب ہوئی تھی اس میں جسٹس تھے آپ تھیں اور کوئی ملٹری پرسنل بھی تھے وہاں پر۔

    جواب: وہاں پر کافی پولیس کے لوگ تھے۔ ایس ایس پی تھے اور ہمیں جہاں لے جایا گیا وہ ایک تھانہ تھا۔

    سوال: یہ پہلے بھی کبھی ایسا ہوا ہے سوئی میں۔
    جواب: نہیں کبھی بھی ہم نے نہیں سنا اور جب مجھے اپائنٹ کیا گیا تو پی پی ایل کے ہیڈ آفس والوں نے مجھے یہ بھی یقین دہانی کرائی تھی کہ ہم خالد کو بھی جاب دیں گے اور کپلز ہی کو پسند کرتے ہیں کیونکہ یہ ایک ریموٹ ایریا ہے۔اور جب ہم وہاں کام کے لیے گئے تو وہاں کے سی ایم نے ہمیں یقین دہانی کرائی کہ شازیہ یہاں اپنے گھر زیادہ محفوظ ہے۔

    سوال: اب کیا امیدیں ہیں۔ آپ کو امید ہے کہ جو بھی کلپرٹ ہے پکڑا جائے گا۔
    جواب: میں یہی چاہتی ہوں کہ میں کیس کروں اور ابھی بھی ایسے لوگ موجود ہیں جن کے ہاتھوں میں قانون محفوظ ہے جیسے کہ پولیس میں ایس ایس پی ثنااللہ عباسی ہیں اور اے ڈی خواجہ ہیں اور وکیلوں میں ہماری ہیومن رائٹس کی عاصمہ جہانگیر ہیں۔

    سوال: آپ اپنا کیس فائل کریں گی۔
    جواب: جی انشااللہ۔

    سوال: آپ نے ابھی تک کیوں نہیں کیا۔
    جواب: ہم کچھ ہیومن رائٹس تنظیموں کے ساتھ مل کر کریں گے۔

    سوال: کیا اسی سال کریں گے۔
    جواب: جی ہماری کچھ ہیومن رائٹس کی تنظیموں سے بات چیت چل رہی ہے۔

    سوال: کیا واپس آنے دیں گے آپ کو۔
    جواب: مسٹر خالد: واپس آنے کا جہاں تک تعلق ہے ہمارا ملک ہے۔ ہم جب چاہیں جا سکتیں ہیں۔ لیکن مسئلہ پروٹیکشن کا ہے۔

    سوال: ادھر انٹیلیجنس کے لوگ آپ کو تنگ کرتے ہیں۔
    مسٹر خالد: جی ابھی تک تو ایسی کوئی بات نہیں ہوئی۔ شازیہ نے جو آواز اٹھائی ہے یہ اپنے انصاف کے لیے لڑ رہی ہے۔اس کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔ابھی ایک اور کیس ہوا ہے سونیا ناز کا۔ حکومت کے ہی رکھوالے ہیں۔
    ڈاکٹر شازیہ: پاکستان میں تو محفوظ ہی نہیں ہوں میں۔ قانون نافذ کرنے والے عورتوں سے زیادتی کرتے ہیں۔

    سوال: اس انسیڈنٹ کے بعد دنیا کے بارے میں انسان کا نظریہ بدل جاتا ہے۔آپ کا بدلا ہے؟

    جواب: میں نے جو آواز اٹھائی ہے ویسٹ میں، عورتوں کو پاکستان میں انصاف نہیں ملتا تو میں کہاں جاؤں۔ جہاں تک ویسٹرن ملکوں کی بات ہے اور اگر یہاں پر کسی سے زیادتی ہوتی ہے تو انصاف بھی ملتا ہے۔

    سوال: اخبار میں پڑھا تھا کہ یہ رات کو سو نہیں سکتیں۔
    جواب: مسٹر خالد: اب بھی ان کی سائکو تھیراپی چل رہی ہے۔ ہفتے میں ایک بار یہ جاتیں ہیں۔ لیکن میں یہ چاہ رہا ہوں کے ان میں حوصلہ آئے۔وکٹم سے سروائیور بنیں ہیں۔

    سوال: شازیہ آپ کیسا محسوس کر رہی ہیں۔ جب یہ واقعہ ہوا تھا تب سے لے کر اب تک؟
    جواب: میں جو بول رہی ہوں وہ اچھا تو نہیں لگ رہا لیکن اس لئیے بول رہی ہوں تاکہ پاکستان میں عورتوں کو انصاف مل سکے اور لا اور آرڈر ٹھیک ہو سکے۔

    سوال: تو کیا آپ اب زیادہ مضبوط محسوس کر رہی ہیں؟
    جواب: جی میں وکٹم سے سروائیور بن گئی ہوں اور مجھے تو انصاف نہیں ملا لیکن میری یہ کوشش ہو گی کہ عورتوں کی آواز بن جاؤں اور اگر ایک عورت کو بھی انصاف ملتا ہے تو وہ میری جیت ہوگی۔

    ایک آرٹیکل چھپا تھا جس سے پتہ چلا کے آپ نے خودکشی کی کوشش کی ہے۔
    جواب: جی حالات کچھ اس طرح کے ہو گئے تھے کیونکہ آپ تو جانتے ہیں پاکستان میں عورتوں عزت نہیں ملتی۔اوپر سے خالد کے دادا نے جرگہ بلایا ہوا تھا اور ان کا فیصلہ تھا کہ شازیہ کو طلاق دے دی جائے۔ اس وقت میں نے خودکشی کرنے کی کوشش کی لیکن خالد اور گھر والوں نے مجھے بچا لیا۔ایک اور آرٹیکل اسلام آباد میں چھپا تھا جس میں لکھا گیا تھا کے شازیہ پریگننٹ ہیں اور خالد لیبیا میں ہیں تو وہ کیسے پریگننٹ ہوئیں۔ تو ایسی باتوں سے تنگ آ کر میں نے باتھ روم میں جا کے خودکشی کرنا چاہی مگر عدنان اور خالد دونوں میرے ساتھ تھے۔ اور عدنان کے کہا کہ ماما اگر آپ اپنے آپ کو مار دیں گی تو میں بھی اپنے آپ کو مار دوں گا دروازہ کھولیں۔ اگر گھر والوں کا اور میرے خاوند کا ساتھ نا ہوتا تو میں کب کی جا چکی ہوتی اس دنیا سے‘۔

  4. ‎”Dr Shahid Masood (ARY Correspendent during that time) came to visit me for an interview & delivered a message from ISI”. Dr Shazia Khalid.

    ڈاکٹر شازیہ کا پہلا ویڈیو انٹرویو

    منیزے جہانگیر
    http://www.bbc.co.uk/urdu/miscellaneous/story/2005/09/050909_dr_shazia_video_int.shtml وقتِ اشاعت: Friday, 09 September, 2005, 20:06 GMT 01:06 PST

    ڈاکٹر شازیہ ریپ کیس کئی ماہ تک پاکستانی اورعالمی میڈیا کی شہ سرخیوں میں رہا۔ یہ کیس پاکستانی فوج اور بلوچ قوم پرستوں کے درمیان ہونے والے تنازعے کا بھی مرکز رہا جس میں کئی افراد ہلاک بھی ہوئے اور یہ معاملہ ابھی مکمل طور پر حل نہیں ہوا۔
    انٹرویو سننے کے لئے یہاں کلک کریں
    ڈائل اپ کوالٹی کے لئے یہاں کلک کریں
    لیکن بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کی کہانی ہمیشہ ادھوری ہی بتائی گئی۔ ان سے پہلے ایسی زیادتی کا شکار ہونے والی بہت سے عورتوں کی طرح ڈاکٹر شازیہ خالد کی کہانی بھی اس سارے معاملے میں کہیں دب سی گئی۔ انہیں بھی دوسری عورتوں کی طرح ابھی تک انصاف نہیں ملا لیکن انہوں نے بھی بہت سی دوسری عورتوں کی طرح انصاف کے حصول کے لئے ہمت نہیں ہاری۔ اور انہیں بظاہر اپنے آپ کو ’مزید شرمندگی‘ سے بچنے کے لئے ملک چھوڑنا پڑا۔

    انٹرویو کا متن پڑھنے کے لیے کلک کریں
    خواتین کے حقوق کی علمبردار تنظیموں کی طرف سے بیانات آتے رہے اور میڈیا میں اس کیس کی کوریج اس وقت تک جاری رہی جب تک ڈاکٹر شازیہ پاکستان میں رہیں۔

    ڈاکٹر شازیہ کے ملک چھوڑنے کے بعد پاکستانی میڈیا سے تو ان کی ’سٹوری‘ غائب ہوگئی لیکن شائد خود ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر کو ہر روز اس اذیت سے گزرنا پڑتا ہے جس کا وہ شکار ہوئے۔

    ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر نے اس پہلے خصوصی وڈیو انٹرویو میں پہلی مرتبہ اس پورے واقعے اور اس کے بعد پیدا ہونے والے حالات کا تفصیل سے ذکر کیا ہے۔

    ڈاکٹر شازیہ کی کہانی ایسی دیگر کہانیوں سے مختلف نہیں۔ ایک عورت زیادتی کا نشانہ بنی جسے انصاف کی تلاش ہے اور اسے زیادتی کا نشانہ بنانے والے کو مبینہ طور پر تحفظ دیا جارہا ہے اور ریاست اپنے ہی عمل کی بد صورتی کو چھپانے میں مصروف ہے۔

    لندن میں پناہ حاصل کرنے کے دیگر خواہشمندوں کی طرح ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر ایک غریب علاقے میں ایک بہت ہی چھوٹے سے گھر میں رہتے ہیں۔ ان کی کل آمدنی برطانوی سرکار سے پناہ گزینوں کو ملنے والی تیس پاؤنڈ فی ہفتہ کی رقم ہے کیونکہ وہ اس وقت تک کام نہیں کرسکتے جب تک ان کی پناہ کی درخواست منظور نہ ہوجائے۔

    ’بے روز اور بے مددگار ہوگئے ہیں ہم ، جلا وطن ہوگئے ہیں، میں کبھی سوچ بھی نہیں سکتی تھی کہ میرے ساتھ بھی یہ ہوسکتا ہے۔‘

    مارچ میں ڈاکٹر شازیہ کے برطانیہ آنے کے بعد سے ان کے مطابق حکومت پاکستان نے ان سے بالکل کوئی رابطہ نہیں کیا اور کسی قسم کی کوئی مدد نہیں کی۔

    ڈاکٹر شازیہ اب ہر ہفتے تھیریپی کے لئے کلینک جاتی ہیں جس سے ان کے مطابق انہیں بہت فائدہ ہورہا ہے۔

    ’victim سے survivor بنی ہوں میں۔ مگر ظاہر ہے ابھی بھی سوچتی ہوں کہ یہ میں ہوں؟ جو میں آپ سے بول رہی ہوں مجھے اچھا تو نہیں لگ رہا مگر کیا کروں؟ ابھی ٹھیک ہونے میں بہت وقت لگے گا میرے زخم اتنے گہرے جو ہیں۔‘

    جب میں ان کے گھر سے واپس جارہی تھی تو ڈاکٹر شازیہ کے شوہر نے مجھ سے کہا ’آپ کتنی خوش قسمت ہیں۔ کل پاکستان واپس جارہی ہیں۔‘

    بلوچستان کے علاقے سوئی میں مبینہ زیادتی کا شکار ہونے والی ڈاکٹر شازیہ خالد کا یہ پہلا تفصیلی وڈیو انٹرویو صحافی منیزے جہانگیر نے خصوصی طور پر بی بی سی اردو ڈاٹ کام کے لیے کیا ہے۔

  5. سوال: پاسپورٹ آپ کے کس پاس تھے؟

    مسٹر خالد: پاسپورٹ ہمارے شاہد مسعود کے پاس تھے اور جب اس کو انہوں نے نکال دیا تو اس نے پاسپورٹ جو تھے کسی دوست کو دئیے تھے اور ان کا دوست ہمارے پاس تقریباً رات ایک بجے آیا تھا اور پاسپورٹ ہمیں دے کر چلا گیا۔

    سوال: ویزہ کس نے لگوایا تھا۔
    جواب: دونوں نے۔ شاہد مسعود نے
    مسٹر خالد: شاہد مسعود نے، محسن بیگ نے لگوایا ہے۔ اب کس نے لگوایا ہے ہمیں نہیں پتہ اس بات کا۔

    مسٹر خالد: ہم سے ملنے سے پہلے وہ اسلام آباد گئے تھے۔ محسن تو وہ ظاہری بات ہے کہ وہ ایجنسی کا بندہ ہی ہے اور شاہد مسعود نے بھی اس کا اقرار کیا۔ اس نے مجھے کہا تھا کہ محسن بیگ گورنمنٹ کا آدمی ہے۔ میں (شاہد مسعود) اور محسن آپ کی مدد کریں گے۔ اب گورنمنٹ شاہد مسعود اور محسن بیگ کے درمیان جو کھچڑی پک رہی تھی اس کا ہمیں تو علم نہیں۔ شاہد مسعود ہم سے اسلام آباد میں انٹرویو لینے کے بعد غائب ہو گیا تھا۔ پھر دوبئی سے اس نے فون کیا تھا۔ بڑا ڈرا ہوا تھا اور ایجنسیز کے لئیے اس نے کافی بری طرح سے باتیں کی تھیں کہ وہ تو ’مجھے ہی مار دینا چاہتے تھے اور میں اپنی جان بچا کے چار ائیرپورٹس سے اپنے ٹکٹ بک کرواکے اور جان بچا کے نکلا ہوں‘۔ پھر اس کے بعد محسن صاحب آ کے کھڑے ہو گئے جی شاہد مسعود صاحب کو ہم نے فرنٹ پہ رکھا ہوا تھا۔ سارا کام اور آپکا ویزہ وغیرہ تو ہمارا کام ہے، وہ تو ہم نے کیا ہے۔ پریزیڈنٹ سے بھی میں آپ کو اجازت دلوا رہا ہوں اور طارق عزیز جو سپیشل ایڈوائزر ہیں ان سے بھی اس نے ملاقات کروائی لیکن اس نے کہا تھا کہ- – – –

    جواب: جب ہم کراچی میں تھے تو ڈاکٹر شاہد مسعود اے آر وائی کے اور محسن بیگ ہمارے پاس ملنے کے لیے آئے تو شاہد مسعود نے کہا کہ محسن بیگ حکومت کا بندہ ہے۔ ہم آپ کی مدد کریں گے۔ آپ کی جانوں کو خطرہ ہے۔

    Breaking news: Who is Dr Shahid Masood? – By Omar Khattab Post Published: 09 August 2010 http://criticalppp.com/archives/20977

Leave Comment

?>