اردو پرنٹ میڈیا کی ایک بار پھر غیر ذمہدارانہ رپورٹنگ

Jul 12th, 2011 | By | Category: Blogs, Daily Express, Daily Nawa-i-Waqt, Jang, Urdu Media, اردو

آج کی تاریخ کے تینوں اثرورسوخ والے اخبارات (جنگ ،ایکسپریس ،نوائے وقت) کو دیکھنے کے بعد اس بات کا پتا چلتا ھے کے اردو پرنٹ میڈیا کے یھ علم بردار بھی سچائی سے کوسوں دور ھیں اور کھانیاں گھڑنے سے بالکل نھیں کتراتے۔

:سب سے پھلے نوائے وقت کی سرخی نیچے ملاحضہ فرمایں

اس بات پر غور کیجیے کہ نوائے وقت یے کہ رھا ھے کے شمسی بیس خالی کرنے کے مطالبے پر امریکہ ناراض ھو گیا ھے اور اسی وجہ کے تحت امریکہ نے پاکستان کی فوجی امداد روک دی۔

:اب آپکے سامنے پیش ھے روزنامہ ایکسپریس اخبار کی آج کی بڑی سرخی

روزنامہ ایکسپریس اپنی سرخی میں امداد روکے جانے کے ساتھ ساتھ اپنے قارین کو یہ بھی بتاتا ھے کہ وائٹ ھاؤس کہتا ھے کہ اسامہ کے خلاف آپریشن پر اسلام آباد کو بہت تکلیف ھوئی ۔ اس سرخی کو پڑھنے کے بعد ایک عام آدمی تو یھی سوچے گا کہ امریکہ اب ھم سے بدلا لے رھا ھے کیونکہ ھم نے امریک کے خلاف اسامہ آپریشن پر آواز اٹھایئ تھی۔

      :اور اب باری آتی ھے روزنامہ جنگ کی۔ نیچے دی گئی جنگ اخبار کی سرخی دیکھیے

جنگ اخبار اپنے قارین کو یہ بتاتا ھے کہ وائٹ ھاؤس نے یہ کہا ھے کہ پاکستانی اقدامات امداد کی معطلی کا سبب بنے اور رقم اس وقت تک نھیں دی جایئگی جب تک تعلقات بحال نھیں ھو جاتے۔

اب ان تمام مضحکہ خیز سرخیوں کو مد نظر رکھتے ھؤے نیو یارک ٹائمز کی اصل رپورٹ کو دیکھیے تو صحیح  بات صاف واضح ھو جاتی ھے۔ نیو یارک ٹائمز میں چھاپی جانے والی اس خبر کا ایک اھم حصہ جو کہ ھمارے اخبارات نے بخوبی نظر انداز کر دیا نیچے ملاحظہ فرمائے

بات دراصل کچھ یوں ھے کہ روکی جانی والی مدد وہ ھے جو کہ استعمال نھیں ھوتی۔ پاک فوج نے جن آپریشن کو سرانجام دینے سے انکار کیا تھا ان آپریشنز کیلئے جو خرچاجات پاکستان کو امریکہ سے ملنے تھے، اس مدد کا ایک بہت بڑا حصہ  تھے۔ اب ان خرچہجات، جو کہ موجود ھی نھیں، انکے روک دئیے جانے کو غلط پیرائے میں پیش کیا جا رھا ھے۔ کچھ اصلحہ اور پارٹ وغیرہ پاک فوج نے خود لینے سے بھی انکار کیا لیکن وہ بات سامنے نھیں لائی گئی اور اس کے علاوہ ٹرینگ کی صورت میں موجود مدد جس کی اب ضرورت نھیں اسے بھی روک دیا گیا ھے ۔

ایک اور اھم بات یہ ھے کی ان تمام اخبارت نے یہ بات نظر انداز کر دی کہ امریکہ نے سماجی اور سولین مدد کو نھیں روکا بلکہ صرف اس فوجی رقم کو روکا ھے جو کہ وہ خرچہ جات تھے جو اب موجود ھی نھیں ھیں۔ اردو پرنٹ میڈیا کے اس روئے کو اب غیر ذمہدارانہ رؤیا نھیں تو اور کیا کھیں گے۔

Tags: , , , , , , ,

Leave Comment

?>