Firing Maya Khan is not the answer

Jan 28th, 2012 | By | Category: Ethics, Samaa TV

Maya Khan screenshot

Maya Khan’s little stunt may have been intended to shame unsuspecting young people, but she ended up only shaming herself. It was Maya Khan’s raid itself that resulted in expressions of disgust not only across Pakistan, but internationally. A week later, Samaa TV announced that Maya Khan has been sacked along with her team. Her insincere ‘apology’ was apparently a slap in the face to not only Samaa’s viewers, but her bosses as well.

As usual, Cafe Pyala notes some important lessons to be learned from the sorry affair. Other media groups, too, are recoiling from the embarrassment. The editorial board at The News termed Maya Khan’s behaviour as ‘Beyond the pale’:

Once again the question of ‘how far’ has arisen. It concerns the limits of private space and how far into that space journalism is entitled to go and under what circumstances. Given the conservative nature of our society there are considerable risks attached to this type of journalism, which panders to the lowest common denominator and fawns at the feet of extremism. It is tantamount to vigilantism, and some might view the segment as a licence to take matters into their own hands and harass – or worse – people who are breaking no law by being together in a public space, whether or not they are related by blood or marriage. The argument has been made that in journalism there are no boundaries – but there are. A responsible news organisation will have a set of ethical rules, the limits beyond which they do not go. This was guttersnipe journalism, unworthy of the name. Young lives may well have been damaged in the sleazy scramble for ratings. It was also indicative of just how far the media in Pakistan has to go before it reaches maturity. This was beyond the pale, and we should not see its like again.

We don’t disagree with Samaa TV‘s decision to fire Maya Khan, and we hope that it sends a strong signal to other journalists that such behaviour is not going to get you fame and fortune. But we also hope that the discussion of journalistic ethics does not stop with Maya’s sacking.

Outrage around Maya Khan’s show resulted largely from the sympathy we all could feel for the victims of her ‘raid’. As The News correctly reflected, “Given the conservative nature of our society there are considerable risks attached to this type of journalism, which panders to the lowest common denominator and fawns at the feet of extremism”.

But it is not only young people who are at risk of this ‘guttersnipe journalism’. Governor Salmaan Taseer lost his life in part due to his treatment by the media. To this day, a disturbing number of people hold the mistaken belief that Governor Taseer was a blasphemer despite their being no evidence to support such accusations.

Salmaan Taseer is an extreme case, but how many people believe that Nawaz Sharif is soft on India, that Asif Zardari tried to flee the country, that Husain Haqqani wrote a memo to Admiral Mullen, or that Imran Khan is secretly meeting with American officials? Just as Maya Khan’s programme gave the impression that the young people were doing something wrong without every actually having any evidence, the media gives false impressions of politicians and public figures also.

Certainly the private lives of ordinary citizens should be treated differently than the public lives of politicians. And certainly politicians who engage in illegal or corrupt practices should be exposed. But they should be exposed with facts and evidence, not with rumour and innuendo designed to give the impression of guilt without ever actually having to prove it. Just as “young lives may well have been damaged in the sleazy scramble for ratings”, the lives of public figures and their families are also damaged by the sleazy ratings race.

Maya Khan may deserve a public sacking, but firing her will not clean up journalism. If we treat Maya Khan’s firing as the solution to the problem, rumours, innuendo and conspiracy theories will continue to dominate headlines long after Maya Khan’s few minutes in the spotlight are long forgotten.

Tags: , , , ,

2 comments
Leave a comment »

  1. ناجا یٔز تعلّقات، غیرت اور خاندانی وقار جیسے عوامل سے وابستہ جرایٔم کی بُنیاد پر عورتوں کو قتل کرنا کویٔ نیٔ بات نہیں۔۔۔ایسا بغیر کسی جرم کے بھی کیا جاتا رہا جیسے پیدا ہوتے ہی زمین میں گاڑ دینا کہ بطور عورت پیدا کیوں ہویٔ۔۔۔۔عورت لڑکی جننے پر بھی قتل ہوتی رہی۔۔۔جس خطّے میں ہم رہ رہے ہیں، وہاں آج بھی ایسا ہوتا ہے، حالانکہ یہ بات اب بنیادی معلومات عامہ کا کا حصّہ ہے کہ لڑکا یا لڑکی پیدا ہونے کا فیصلہ کُن جز عورت کی طرف سے نہیں بلکہ مرد کی جانب سے آتا ہے۔۔۔اکیسویں صدی میں عورتوں کو زندہ درگور کرنے کا بدنُما داغ بھی پاکستان کے ماتھے پر لگا۔۔۔اس واقعے کی مذمّت کرنے والوں کو قانون ساز ادارے کے رُکن نے جواب دیا کہ یہ ثقافت کا حصّہ ہے اور اس پر بات نہ کی جاۓ۔۔۔یہ سب سیاہ کاری، خون کاری اور لچرپن کی انتہا نہیں تو کیا ہے۔۔۔دوسری طرف سیاہ کاری اور کارو کاری جیسے اصطلاحات کے تحت مرد اور عورت کو ناجایٔز تعلّقات کے کسی درجے میں داخل قرار دے کر بسا اوقات محض شک کی بنا پر مار دیا جاتا ہے۔ بے شمار مواقع پر اس دام کو محض اس لیۓ بچھایا جاتا ہے کہ کسی مرد یا عورت کو صفحۂ ہستی سے مٹانا مقصود ہوتا ہے۔

    قاریٔن! اس تحریر کا مقصد تاریخ اور عورتوں کے خلاف تشدّد جیسے موضوعات کی جُگالی کرنا نہیں بلکہ تاریک ضیایٔ دور کی باقیات کو مسلسل زندہ رکھنے اور ملک و قوم کو ایک تماشا بنانے کے رُجحان کی نفی کرنا ہے۔ پاکستان پیپلز پارٹی روشن خیالی اور ترقّی پسندی کی داعی رہی ہے۔ شہید بے نظیر بھٹّو کے پہلے دور حکومت میں موسیقی کا ایک پروگرام ٹی وی پر پیش ہوا۔ اس پات پر ایک طوفان بد تمیزی شروع ہوا کہ نوجوان لڑکے اور لڑکیاں ہاتھ بلند کرکے موسیقی کی لے پر جھومتے رہے حالانکہ انہوں نے اپنی نشستوں پر بیٹھے بیٹھے ہی ایسا کیا تھا اور اُنکی یہ حرکت کسی طرح بھی “رقص” کے ضمن میں نہیں آتی تھی۔۔۔آتی بھی تو اس میں کیا قباحت تھی لیکن حکومت دفاعی اور معذرت خواہانہ پوزیشن لینے پر مجبور ہویٔ۔۔۔90 کی دہایٔ تھی، محترمہ کے دوسرے دور حکومت میں ملک کے دور دراز سے آنے والے نوجوان جو تخت لہور کے ٹور دیکھنے نکلے تھے، اُس وقت ہکّا بکّا رہ گۓ جب نیو کیمپس کے کیفیٹیریا میں ویٹر نے اُنہیں بتایا کہ اُنہیں اس وقت تک سرو نہیں کیا جاسکتا جب تک مرد اور عورتیں اپنے لۓ بنے الگ الگ حصّوں میں نہ چلے جایٔں!

    پاکستان پیپلز پارٹی کے چوتھے دور حکومت میں خاتون ٹی وی اینکر مایا خان کی قیادت میں پبلک پارک پر چھاپہ مارنے کا واقعہ پیش آیا جس میں وہاں موجود جوڑوں سے سرزنش کے لہجے میں اُنکے باہمی رشتے اور تعلقات کی نوعیّت کی بابت پوچھا گیا۔۔۔یہ سب کچھ ٹی وی پر بھی دکھایا گیا اس یقین دہا نی کے باوجود کہ مایٔک اور کیمرے آف ہیں۔۔۔ہم نے پاکستان پیپلز پارٹی کا حوالا بارہا اس لیۓ دیا ہے کہ تاریک ضیایٔ دور کے بعد حکومت کرنے والی دوسری پارٹی ایک عرصے تک تو ڈکٹیٹر کا مشن پورا کرنے کی بات کرتی رہی یا پھر آیٔنی ترمیم کے ذریعے اپنے قایٔد کو امیر المومنین بنا کر مسلّط کرنے کی کوشش کرتی رہی۔۔۔حال ہی میں اسی جماعت کے زیر حکمرانی پنجاب میں اسمبلی نے تعلیمی اداروں میں موسیقی کے پروگراموں پر پابندی کی قرارداد منظور کی۔۔۔۔ کچھ سال پہلے جنرل مشرف اور شوکت عزیز کے دور میں کراچی کے ایک سینما ھال پر پولیس نے چھاپہ مارا جس میں فلم بین جوڑوں کو جانوروں کی طرح ہانکا گیا، اُنکے کپڑے پھاڑے گۓ اور بالوں سے پکڑ کر سڑک پر گھسیٹا گیا۔۔۔اُنکا جرم؟ سر عام اُنکی عزت نیلام کرنے والوں کے خلاف کار روایٔ؟ بابا، مملکت خداداد میں ایسے سوال نہیں پوچھتے۔۔۔ہمیں سخت حیرت ہویٔ کہ کراچی میں پیش آنے والا یہ وقوعہ میڈیا نے ایک خبر چلانے کے بعد دبایا کیوں تھا۔۔۔۔سوشل میڈیا کا رواج اُن دنوں البتہ نہیں تھا۔۔۔!

    چھاپے تو وقتا فوقتا مختلف درجے کے ہوٹلوں اور گیسٹ ہاؤسوں پر بھی مارے جاتے ہیں۔۔۔ایسا کرنے کے صحیح یا غلط ہونے کی بحث میں پڑے بغیر ہم عرض کیۓ دیتے ہیں کہ عموما زیادہ شور نہیں مچتا، شایٔد اسلیۓ کہ پکڑے جانے والوں میں اکثریّیت جسم فروشی کے دھندے میں ملوّث ہوتے ہیں اور چھاپے کا اصل مقصد عموما قوم کا کردار سیدھا کرنا نہیں بلکہ بھتّہ دینے، نہ دینے پر اختلاف یا کویٔ اور دباؤ ہوتا ہے۔۔۔یہاں بھی یہ سوال اہم ہےکہ ایسے چھاپوں کا شکار بننے والوں کا قصور کیا ہوتا ہے۔۔۔ جن کا تعلّق جایٔز ہوتا ہے اور وہ چھاپے کے وقت ہوٹل میں سو رہے ہوتے ہیں۔۔۔انہیں کیوں رسوا کیا جاتا ہے اور عذاب میں ڈال دیا جاتا ہے۔

    آتے ہیں مایا خان کی تازہ ترین کار روایٔ کی طرف۔۔۔میڈیا اور باالخصوص سوشل میڈیا لاکھ شاباش کا مستحق کہ اس حرکت کی مناسب انداز میں دھنایٔ کی۔۔۔افراد اور خاندانوں کے ہونے والے نقصان کی تلافی تو خیر کیا ہونی تھی۔۔۔ایک اجتماعی بھلایٔ ضرور ہویٔ اور وہ یوں کہ متعلقہ ٹی وی چینل نے مایا خان صاحبہ کو فارغ کردیا۔۔۔ہماری تجویز ہے کہ جس طرح شاونزم کی اصطلاح نپولین کے سپاہی نکولس شاون کے نام پر اُسکے جنون اور دیوانگی کی حد تک انتہا پسند سوچ اور رویّے کی وجہ سے رایٔج ہویٔ، اسی طرح جنس اور تعلقات کے نام پر لوگوں کو ہراساں کرنے کی ریت کو حالیہ وقوعہ کے تناظر میں “مایا کاری” کا نام دیا جاۓ۔ مجوّزہ اصطلاح پاکستان میں موجود کیٔ ننگ تہذیب اصطلاحات جیسے سیاہ کاری اور کارو کاری کی ہم قافیہ بھی ہے۔۔۔

    (نوٹ) اس تحریر کو خدا نخواستہ مادر پدر آزادی اور اخلاق باختگی کی حمایت نہ سمجھا جاۓ۔۔۔ایسا ہر گز نہیں ہے۔۔۔ہم یہ ضرور پوچھتے ہیں کہ “مرد مومن” کے دور حکومت سے پہلے کیا پاکستان ایک بہتر معاشرہ نہیں تھا جب افراد اور اداروں کے ہاتھ میں لوگوں کو ہراساں کرنے کے ہتھیار نہیں تھے۔۔۔!!

  2. Baraister Mohammad Ali Siaf nay joo DALAL BUGTI KOO KAHAH hay bilkul sihi thah aur aus nay mary khaliat ki teek tarjumani ki hay,thank saif tahnks ,Gen:Musharaf was a good leader and Army Chief of pakistan army in his tenure bugti ka qatal Mushraf Nay Nahi ais kay Son Dalal Bugti nay karwaa hay.Yay hay Sach.

Leave Comment

?>