Archive for the ‘Uncategorized’ Category

Pakistan’s journalists abandoned by the courts

Friday, January 13th, 2012

This week marked a dark day in the history of Pakistani journalism. The last refuge of justice in our country closed the door to the journalist community, and sent a message loud and clear that Pakistan’s journalists have no rights when faced with threats from powerful quarters. We are referring, of course, to the judicial whitewashing of the murder of Saleem Shahzad.

It is ironic that so much has been made lately of Article 19A, the right to information, which should be a shield of protection for journalists in a nation with a supposedly free media, and yet it is apparent that the right to expose who is murdering journalists in this country and why has been set aside for reasons unstated. Rather than exposing the Saleem Shahzad’s killers and sending a message to those who would threaten and kill other journalists, the judicial commission instead found no culprits, only suggested a payment of Rs3 Million to Shahzad’s widow. Now we know the value of a journalist in Pakistan – about the cost of two Corollas.

Writing in The News today, senior journalist and former secretary Pakistan Federal Union of Journalists (PFUJ) Mazhar Abbas notes that journalists are effectively on our own.

“The authorities are not taking the issue seriously enough, particularly in cases where the “intelligence agencies” come into the equation. Therefore, Pakistani journalists need to fight their own cases with the effective support of their unions.”

This state of affairs has serious consequences not only for the lives of individual journalists, but for the security of the nation itself. Director current affairs at Dunya TV Nasim Zehra on Thursday proposed that “a vibrant media can thwart a coup” by ensuring that,

…the moves of all power players — government, politicians, army, and now the judiciary — are examined for historical precedents, legality, constitutionality, double standards; and whether they are based on individual, institutional, party or national interests.

Unfortuantely, Nasim’s theory is based on a false premise. Media cannot scrutinise the moves of all power players. Yes, Dunya TV will courageously repeat worn out conspiracy theories about Husain Haqqani while he sits behind heavy security, but following the judicial commission’s failure to find anyone responsible for the killing of Saleem Shahzad?

Having seen that a prominent reporter can be killed with no consequences for those involved is sure to have a chilling effect on the profession. Will those who report critically on the military refrain from doing so in the future for fear that they may end up in a ditch somewhere? The commission has also shown Mr Shahzad’s killers, whoever they may be, that they can operate with impunity.

It is not only Saleem Shahzad who has been killed for reporting information that someone did not like. Zahid Qureshi was tortured and mutilated for his reporting. Umar Cheema was kidnapped and tortured when he reported information that upset someone. Kamran Shafi had his family home strafed with gunfire and received threatening phone calls warning him to stop reporting information that some didn’t like. Samaa TV’s Ghulamuddin and his family have been forced into hiding in their own country. Recently, Hamid Mir has received threats for his reporting. Najam Sethi, who has been the subject of what appeared to be a coordinated campaign of harrassment continues to receive threats for his reporting.

Journalists are not powerless, though. We have the ability to ask difficult questions and press for information that most people are unable or unwilling to. While the nation’s attention is planted squarely on the court, we should take the opportunity to ask, “What about Saleem Shahzad?” What about the rights of the people to information that is supposedly so inalienable? Demanding these answers will not only protect the lives of journalists, it will protect the life of the nation. There are murderers among us, and they must be exposed.

میڈیا کا سیاست میں رول

Wednesday, December 28th, 2011

اے این پی کے لیڈر زاہد خان صاحب کی کلپ پاکستان میڈیا واچ نے اس لئیے قارین کے سامنے پیش کرنا مناسب سمجھی تاکے میڈیا کا رویہ منظر عام پر لایا جا سکے۔

زاہد خان صاحب چند اہم نکات مییڈیا سے وابستتگی کی بنیاد پر اٹھاتے ھیں۔اور میڈیا کو جانب دار ٹھرایا۔  نیچے دی گئی حامد میر کے شو کیپیٹل ٹاک میں آنے والی کلپ ملاحظہ کیجئیے۔

سینیٹر زاہد خان کی گفتگو آپ نیچے سن سکتے ھیں۔ پاکستان میڈیا واچ کئی بار اسی رؤئے کو سامنے لاچکا ہے اور کئی بار میڈیا کی غیر ذمہدارانہ رپورٹنگ کی ملامت کر چکا ہے۔

 

پاکستانی میڈیا کا انتشار اور عوام کی جھنجھلاہٹ

Wednesday, December 7th, 2011

نیچے دی گئی فیڈ بیک/ رائے پاکستان میڈیا واچ کے ایک معزز ریڈر کی جانب سے بھیجی گئی ھے۔ پاکستان میڈیا واچ اپنے تمام قارین کے بھیجے گئے مضامین اور رائے کا خیر مقدم کرتا ھے۔ اگر آپ پاکستان میڈیا واچ کو اپنی رائے سے آگاہ کرنا چاھتے ھیں تو برائے مہربانی ھمارے ای میل پر ھم سے رجوع کیجیئے۔


میں امریکی شہر اٹلانٹا میں رہائش پزیر ایک بزنس مین ہوں۔ میں آپکا بلاگ کئی سالوں سے پڑھتا آ رہا ہوں  اور آپ کی پاکستانی میڈیا کو ان چیک رکھنے کی کوششوں کا بڑا فین بھی ہوں۔ حال ہی میں میرا عید کےموقع پر پاکستان جانے کا اتفاق ہوا اور میڈیا کی حالت دیکھ کر یقین کیجیئے رونے کا دل کیا۔ میں اپنا یہ آنکھوں دیکھا حال پاکستان میڈیا واچ اور اس بلاگ کے تمام ریڈرز کو بتانا چاہوں گا۔

چونکہ میرا یہ پاکستان کا چکر تقریبن تین سوا تین سال بعد تھا میں میڈیا چینلز کی بے چینی اور غیر ہم آہنگی دیکھ کر حیران ریہ گیا۔ جس چینل کو دیکھو وہ من گھڑت اور سنسنی خیز خبریں رپورٹ کرنے میں لگا ہوا ہے۔ اب چاہے وہ معاملا میمو گیٹ ہو یا این آر او یا ذوالفقار مرزا اور ایم کیو ایم کے متعلق پاکستانی میڈیا کو کہانیاں بناتے اور عوام کو پیش کرتے بالکل دیر نہیں لگتی۔ خبر کے آنے تک اور اس کی تصدیق ہونے تک بات کا بتنگڑ بن چکا ہوتا ہے اور خبر کہیں سے کہیں اور نکل جاتی ہے۔ ٹی وی چینلز پر اینکر حضرات سچائی سے کوسوں دور اپنے ماہرانا تجزیات پیش کرتے ہوئے نظر آتے ہیں اور اپنے خیالات کو سچ یعنی کے فیکٹ قرار دینے لگتے ہیں۔

قارین کا زیادہ وقت لیئے بغیر میں صرف دو مثالیں دوں گا۔ نمبر ایک میرا اتفاق شاہد آفریدی۔ جی ہاں ہمارے مشہور کرکٹر۔ کو حامد میر شو میں سننے کا ہوا۔ آفریدی صاحب اس شو میں اپنا ماہرنا تجزیہ پیش کرنے لگے لیکن کرکٹ نہیں سیاست پر۔ کرکٹ اور سیاست کا لنک مجھے کچھ خاص سمجھ نہیں آسکا اور نا ہی حامد میر صاحب نے سمجھایا۔ نمبر دو مجھے یہ سمجھ نہیں آیا کی کہانیاں گھڑنے سے نیوز چینلز ایسے لگتا ہے خبریں کم اور انٹرٹینمنٹ کی فراہمی کا کاروبار زیادہ کر رہے ہیں۔ چاھے وہ امریکہ میں پاکستانی سفیر کا استعفی ہو ۔ شرجیل میمن اور مرزا صاحب کا لندن کا دورہ  ۔ یا پہر حال ہی میں صدر صاحب کا مرز قلب کے بنا پر دبئ کا دورہ یا نیوز اینکر کی خبر کی فراہمی کا  طنز یہ انداز پاکستانی نیوز میڈیا لگتا ہے پروفیشنلزم نام کی چیز سے بالکل نا واقف ہے۔ایک خبر سے دس مختلف خبریں نکالنا کوئی پاکستانی میڈیا سے سیکھے۔ خبر کو شائع کرنے سے پہلے تصدیق نا کرنے کا رواج میں نے پچھلے چند ہی سالوں میں اوپر آتے دیکھا ہے اور خوفناک بات یہ ہے کہ اس سب کو ان چیک یا روکنے والا کوئی نہیں۔

مختصرن یہ کہ پاکستان سے واپس آنے کےبعد اب مجھے فاکس نیوز پر زیادہ غصہ نہیں آتا اور پاکستانی میڈیا کی اس حالت سے میں کچھ زیادہ پر امید بھی نہی ہوں۔ میں البتہ اپنے ملک کی بگڑتی ہوئ حالت پر لله سے دعاگو ضرور ہوں۔ پاکستان زندہ باد

Is media playing favourites?

Thursday, November 24th, 2011

Meher Bokhari and Imran Khan

We’re all well aware of just how vicious the media can be, especially when it comes to politics. Whoever is in power at the time will always suffer the greatest number of attacks, but even opposition politicians are not usually spared the venom of our talk show hosts and their guests. So when a politician is given soft treatment, it’s hard not to notice.

Writing for The Express Tribune, Ayesha Ijaz Khan, a lawyer and political commentator, had noticed that the media appears to be giving the soft touch to Imran Khan.

The electronic media has undoubtedly played a large part in introducing Imran Khan as a political option. On some talk shows, Imran is a regular, appearing at least a couple of times every month. However, the frequent appearances notwithstanding, the PTI still remains an enigma in the minds of many viewers. With a few exceptions, notably an excellent “Hard Talk”- style interview conducted by Iftikhar Ahmad on “Jawab Deyh” (October 2, 2011), most talk show hosts end up chit-chatting drawing room style with Imran, allowing him to talk big on generalisations but omitting to grill him on any specific plans.

And unlike the generalisations that are being allowed to pass in some channels, Ayesha provides specifics.

Shortly after his successful Lahore rally, Imran appeared on Nasim Zehra’s “Policy Matters” (November 5, 2011). To the anchor’s credit, she had researched Imran’s declaration of assets, but when she questioned him on the discrepancy between the present market value of Imran’s assets and the far lower purchase value disclosed on the return, he dismissed her question altogether, choosing to lecture us instead on accounting principles, Imran-style. As the conversation progressed to his China trip, the fluffiness of Imran’s responses became even more apparent. When he spoke of China pulling millions out of poverty, Ms Zehra agreed, as would most of us, that this is an enormous accomplishment. But there were no follow-up questions when Imran claimed that Pakistan could use the Chinese model. How, I wondered, would Pakistan apply the Chinese model? China has certainly made giant economic strides but would these have been possible without its strict one-child policy? Hasn’t China also severely curbed religious practice and democracy? Are these measures possible, or even advisable, in Pakistan?

When some people agree to appear on talk shows, they know they will be taking a beating. Others are treated with respect to their face, only to be skewered the following night when they are not there to defend themselves. It is the rare politician who is given the soft treatment both on the air and off. We do not take a position on whether or not Imran Khan or his PTI deserve support, but we do take a position on whether the media should treat some politicians differently than others based on their own political preferences and personal biases.

میڈیا کی عدالت اور حسین حقانی

Sunday, November 20th, 2011

آج کل کے تمام تر ٹی وی کےپروگرامز کو دیکھنے کے بعد یہ اندازہ ھوا کہ ھمارا میڈیا انصاف کے اصولوں سے ناواقف ھے۔ کسی بھی ایک موضوع یا شخص کو ھدف بنا کر اپنی تمام توانائیاں صرف کر دیتے ھیں۔ کچھ اپنے اداروں کے مقاصد حاصل کرنے کی کوشش کرتے ھیں اور کچھ اپنے آقاؤں کو خوش کرنے کی۔ نتیجہ یہ کہ قارئین تزبزب کا شکار رھتے ھیں۔

اب حال ھی میں میموگیٹ سکینڈل کو ھی لے لیں۔ ھر چینل نے بنا کسی تحقیق و تصدیق کے اپنا اپنا اظہار خیال شروع کر دیا۔ اس کے علاوہ اپوزیشن پارٹی کو تو موقع ملنا چاہیے۔ نوٹ کرنے والی بات یہ ھے کہ زیادہ تر کیا سارے ھی چینلز نے پاکستانی سفیر حسین حقانی کا موقف لینے کے بجائے مشکوک کردار کے مالک منصور اعجاز جو کہ ایک امریکی شھریت رکھتے ھیں اور جنہوں نے کئی بار پاکستان اور اسکی افواج کے خلاف منفی  خیالات کا اظہار اور منفی مضامین چھاپے ھیں سے رجوع کرنا زیادہ مناسب سمجھا۔

یہاں پر یہ بات قابل ذکر ھے کہ حامد میر سب سے پہلے اینکر تھے جنہوں نے حسین حقانی سے رابطہ کیا اور ان کا موقف اپنے پروگرام میں پیش کیا۔ اس پروگرام کی کلپ نیچے ملاحظہ کری

Capital Talk Hamid Mir Nov 17 2011

اس کے بعد امریکہ میں موجود پاکستانی سفیر حسین حقانی نے دیگر پروگرامز میں اپنے حوالے سے اٹھائے گئے سوالات کا جواب دیا۔ حیران کن بات یہ ھے کہ اس انٹرویو سے قبل اور اس کے بعد بھی منصور اعجاز مختلف چینلز پر اپنا مقدمہ پیش کرتے رھے اور مزید حیران کن بات یہ ھے کہ ایک امریکن سٹیزن سے رابطہ کرنا زیادہ آسان ھے جو کہ یورپ منتقل ھو چکے ھیں اور ایک پاکستانی سفیر سے زیادہ مشکل جو کہ واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے میں پائے جاتے ھیں۔ تعجب خیز بات یہ بھی ھے کہ ہر ٹی وی چینلز مختلف قیاس آرائیوں پر مبنی خبریں پیش کرتے رھے مثلا اےآرواے نے کہا کہ پاکستانی سفیر اپنی ڈی سی کی رہائش گاہ سے کہیں اور منتقل ھو چکے ھیں۔ دنیا نے کہا کہ ان کا استعفی صدر کو موصول ھو چکا ھے جبکہ موصوف ایمبیسیڈر نے ابھی تک  استعفی دیا ھی نہیں۔ خواجہ آصف صاحب نے امریکی شہریت رکھنے کا الزام حسین حقانی پر لگایا کیا ان کے پاس ایک عرب روپے ھیں کیونکہ شاید وہ یہ بھول گئے کہ اسی بات پر نوائے وقت نے حال ھی میں پاکستانی سفیر سے معافی مانگی تاکے انہیں ایک عرب روپے کا ہرجانا نا دینا پڑے۔

پاکستانی میڈیا کو ذمہ داری کا ثبوت دیتے ھوئے حقائق پر مبنی تحقیق کے بعد ناظرین کے سامنے صحیح صورت حال کو پیش کرنا چاھئے اور من گھرٹ قیاس آرائیوں سے پرہیز  کرنا چاھئے۔

 

Beighariat Karnay Wali Brigade

Wednesday, October 26th, 2011

The YouTube video for ‘Aalu Anday’ may have made Beyghairat Brigade an instant Internet sensation while making the politicians and officials who were the targets of their satire uncomfortable. But there’s one group in particular that should have felt especially shamed by the popularity of ‘Aalu Anday’, and that’s the media which avoids any confrontation with truly controversial issues, choosing instead to focus its wrath on the easy targets of politicians and wild conspiracy theories.

This habit of attacking easy targets and ignoring more powerful ones does not go unnoticed. A BBC report on the Aalu Anday sensation pointed squarely at the media’s lack of attention to serious issues as a driving cause of the video’s popularity.

Ordinarily, satire on Pakistani television is tolerably amusing but not very daring.

It only really targets the harmless figures on the political landscape – the politicians. They are easy prey, veteran comedians argue, because they do not truly hold the reins of power.

There are more than a dozen comedy shows that Pakistani channels broadcast weekly. They include skits, rants and Indian film songs adapted to the political situation.

But the more insidious presence of Pakistan’s intelligence services and also the army – which many believe are the true power-brokers in the country – are conspicuously absent from comedy fare…

Although politician-bashing is the rage, many feel that truly free intellectual debate and parody are lacking as far as TV goes.

And so a group of three young people have shown the courage to speak out about the powers that be while so-called journalists continue peddling the same worn out conspiracy theories and safely throwing punches at the politicians who they know will not hit back.

In fact, if a politician or government official dares to respond to their rumours and conspiracies, our friends in the journalism community are quick to scream about free speech and oppression. But their silence on the issues that really matter, while a group of kids boldly calls things as they are, exposes the weakness of their claims of being fearless defenders of media freedom.

انصار عباسی کی بے دلیل منطق اور تنقید

Thursday, October 13th, 2011

پاکستان میڈیا واچ اگرچہ انصار عباسی کا کالم انگریزی زبان میں چھاپ چکا ھے لیکن پھر بھی ھماری ٹیم نے اردو میں پوسٹ کرنا اور بھی مناسب سمجھا تاکہ اردو قارین بھی اچھی طرح سچائی سے واقف ھو سکیں۔

انصار عباسی اپنے جنگ کے کالم میں سلمان تاثیر کے قاتل ممتاز قادری کی انسداد دھشت گردی عدالت کی سزا کو عدالت کی ایک کوتاھی بیان کرتے ھیں۔ جج کے فیصلے کو غیر تسلی بخش قرار دیتے ھوئے وہ فرماتے ھیں کہ عدالت نے سب سے ضروری چیز کو نظر انداز کر دیا۔ وہ ضروری چیز یا فیکٹر بقول انصار عباسی حکومت کی بے نیازی ھے۔ انصار عباسی کا زیر بحث کالم نیچے ملاحضہ کیجیے۔

انصار عباسی اپنے کالم میں اس کیس کو کچھ یوں ظاھر کرتے ھیں کے جیسے اگر حکومت اس قدر بے نیاز نا ھوتی اور سلمان تاثیر کا نوٹس لیا ھوتا جب انھوں نے توھین رسالت کے قانون کو کالا قانون کہ کر اس کی بے حرمتی کی اور آسیہ بی بی سے یہ کہا کہ انھوں نے توھین رسالت نھیں کی ھے تو ممتاز قادری جیسے مایوس شھری کو سلمان تاثیر کا قتل نا کرنا پڑتا۔

دراصل انصار عباسی صاحب کی بات سچائی سے کوسوں دور ھے۔
1.  توھین رسالت قانون قران شریف سے نھیں نکالا گیا بلکہ یہ جنرل زیا الحق نے آئین میں شمار کروایا تھا۔
2.سلمان تاثیر اس قانون کے استعمال سے ناخوش تھے اورانھوں نے اسی بات کو مدنظر رکھتے ھوئے آسیہ بی بی کے موضوع پر کہا تھا کہ ان کے خلاف جن لوگوں نے کیس درج کیا تھا ان کے پاس ثبوتوں کی کمی تھی۔

ایک رپورٹ کے مطابق سلمان تاثیر نے آسیہ بی بی کے کیس کے بارے میں کچھ یوں کہا تھا کہ یہ ایک متنازع کیس ھے اور الزام تراشی کرنے والوں کے پاس ثبوت کی کمی ھے۔رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا کہ سلمان تاثیر قانونی کاروائی میں دخل اندازی نھیں  دینگے اور جس حد تک مدد کر سکے کرینگے تاکہ آسیہ بی بی کو اس بات کی سزا نا ملے جو انھوں نے نا کی ھو۔

اب آئیے عباسی صاحب کی ایک اور غلط فھمی کی طرف۔ اپنے کالم میں وہ ایسے ظاھر کرتے ھیں جیسے  سلمان تاثیر نے ایک لیڈر ھونے کے ناطے آسیہ بی بی کی رھائی کی کوشش کر کے ایک غیر اسلامی حرکت کی جب کہ حضرت آئشہ رضی لله سے روایت ھے کہ نبی کریم نے فرمایا کہ ایک لیڈر  کے لیئے یہ بھتر ھے کہ وہ غلطی میں معاف کرے بجائے اس کے کہ وہ غلطی میں سزا دے۔ یہ ایک سچ حدیث ھے۔


اس کے علاوہ انصار عباسی جس توھین رسالت قانون کو مقدس کہتے ھیں اس قانون یں تبدیلیاں لانے کے حق میں کاؤنسل آف اسلامک آئڈیالوجی ھے۔ یہ کاونسل اسلامی اسکارز پر مشتمل ھے اور اس کاؤنسل نے توھین رسالت قانون میں تبدیلی لانے کی حمایت کی ھے۔


یہ تو بات ھوئی صرف انکے غلط فیکٹس کی۔ اب آئیے انکی بے بنیاد دلیل کی جانب۔ انصار عباسی صاحب فرماتے ھیں کہ چونکہ سیشن کورٹ نے آسیہ بی بی کو سزا موت سنا دی تھی سلمان تاثیر ایک ممجرم کی طرف داری کر رھے تھے جس کا نوٹس حکومت نے نھیں لیا اور اس بات کو انسداد دھشت گردی کورٹ یعنی اے ٹی سی کورٹ نے نظر انداز کر دیا۔مگر سوچنے کی بات ھے کے اسی لاجک اور دلیل کے بل بوتے پر کیا انصار عباسی صاحب جیل تشریف لے جانا چاھیں گے۔کیونکہ ممتاز قادری بھی ایک مجرم ھے جسے باقائیدہ عدالت نے سزا موت سنائی ھے۔اور انصار عباسی اس وقت خود ایک عدالت سے سزا یافتہ ملزم کی جوش و جزبے سے طرف داری کر رھے ھیں جسے جنگ گروپ نے اپنے صفحہ اول پر چھاپا ھے۔

ان باتوں سے یہ ظاھر ھوتا ھے کہ انصار عباسی کے تمام سچ اور انکے دلائیل سخت کمزوری کا شکار ھیں۔ لیکن اس سب میں جنگ گروپ کی بے نیازیوں کو نظر انداز نھیں کیا جا سکتا۔انصار عباسی کی دھشت گردی کی طرف نرم دلی سے تو کافی لوگ آگاہ ھیں ھی لیکن کیا جنگ گروپ کا اس اشو یعنی موضوع کی جانب غور کرنے اور اسے صحیح کرنے کا ارادہ ھے بھی کہ نھیں۔کیا وہ اب بھی اردو قارین کو ایسے شدت پسند مضامین پڑھنے کا موقع دیتے رھیں گے۔ اس بات کا جواب حاصل ھونا صرف ضروری ھی نھیں بلکہ لازم ھو چکا ھے۔

Who’s afraid of Najam Sethi?

Saturday, October 1st, 2011

Spats between politicians are a regular occurrence – Altaf and Nawaz’s verbal back and forths are the stuff of legend. This can be somewhat expected between politicians as they are competing for votes and attention from many of the same constituencies. Though journalists are also competitive, this is usually carried out on the merits of reporting and commentary and not in petty insults and accusations. Usually, though not always. In the past week, actually, we have seen a growing number of attacks aimed at one particular journalist, Najam Sethi. But rather than being part of a personal feud, it appears that these attacks may be part of a coordinated campaign.

On Monday, Mubashir Luqman discussed the supposed American threat of attack on his show Khari Baat. At the end of the programme, though, surrounded by his invited guests Maleeha Lodhi and Hamid Gul, Luqman lashes out at Najam Sethi (forward to 8:51).

This seemed to be a strange turn for the conversation to take, but what was even more strange was when Luqman went out of his way to attack Najam Sethi on PTV’s Morning Show.

As you can see, Noor becomes visibly uncomfortable with Luqman’s unprompted attack on Najam Sethi. Some might think that Luqman’s strange behaviour was the result of a personal feud between the two men, but then our attention was pointed to another article attacking Mr Sethi which appeared on a website ‘Views Times‘.

Like Mubashir Luqman’s attacks, the article accuses Mr Sethi as a tool of American policy. Only, this piece goes even further and makes the bizarre claim that Najam Sethi is advising the American government.

The Americans were left with no choice–they halted the 800 million in aid to the Pakistani military. They were banking on the advice given to them by Mr. Njam Sethi and gang.

Though he is an internationally renowned and award-winning journalist, it’s rather far fetched to claim the American government was taking policy dictation from Najam Sethi.

In stark contrast to Najam Sethi’s career, his attackers are mostly non-entities from an exposed propaganda ring. The website, Views Times is one of several fake news sites associated with propagandists like Ahmed Quraishi and Major Raja Mujtaba.

Actually, a Google search for a random line in the piece on Views Times found 49 results – all fake news sites like ‘Times of Bombay’ and ‘Times of Kabul’ and ‘Karachi Telegraph’. Oh, and the incredibly well funded PKKH, a project of Ahmed Quraishi, Shireen Mazari, and Hamid Gul.

Like too many of our fellow journalists, Najam Sethi has already suffered for giving voice to views that were unpopular in some quarters. He was ‘preventatively detained’ by Gen Zia, and later imprisoned by the government of Nawaz Sharif for exposing corruption. Of course he was accused then with the all-too-familiar charge of ‘treason’.

For his unwillingness to cower in the face of intimidation, Najam Sethi has received the Journalism Under Threat award from Amnesty International and the International Press Freedom award from Committee to Protect Journalists.

Whoever is behind this campaign to attack Najam Sethi, the question that must be asked is whether Pakistan’s media is truly ‘free’ so long as journalists are smeared, threatened, or worse when they report views that some do not like.

و’کھری بات مبشر لقمان کے ساتھ’

Monday, September 19th, 2011

مبشر لقمان اپنے پروگرام کھری بات لقمان کے ساتھ میں امریکہ میں ھونے والے ستمبر 11 ,2001 کے سانحے کو ایک محض فریب اور دھوکہ کہتے ھیں۔ ان کے پروگرام کی ایک کلپ نیچے ملاحضہ فرمائیے۔

یہ پھلی بار نہیں ھے کہ مبشر لقمان اپنے پروگرام کی ریٹنگ بڑھانے کے لئیے من گھڑت کہانیاں بنانے لگتے ھیں۔ پاکستان میڈیا واچ پہلے بھی کئی بار انکے پول کھول چکا ھے۔

مبشر لقمان نے اپنے پروگرام میں کانسپیرسی تھیوری پیش کی جو کہ کئ با ڈی بنک یعنی غلط ثابت ھو چکی ھے۔ انھوں نے اپنے شو میں یہ بات دائر کرانے کی کوشش کی کہ ستمبر کا یہ واقع امریک کی جانب سے ایک ڈھونگ اور تماشہ تھا اور دراصل امریکہ نے ورلڈ ٹریڈ سینٹر کی بلڈنگ کو سیلف ڈیٹونیٹ یعنی خود کردہ دھماکہ کر کے تباہ کیا ھے۔

مبشر لقمان نے اپنے پروگرام میں یہ بھی فرمایا کہ امریکہ کی سٹیٹ پینسلوینیا میں اسی تاریخ کو گرنے والے جہاز کو امریکی حکام نے خود مار گرایا۔ انھوں نے پھر بلڈنگ سیون کے بارے میں چند باتیں کریں۔

پاکستان میڈیا واچ ٹیم نے مبشر لقمان کے سب سوالات سننے کے بعد تمام باتیں اپنے قارین کو بتانا ضروری سمجھی ھیں۔

مبشر لقمان کہتے ھیں کی اتنی بڑی بلڈنگ اس طرز سے نھیں گر سکتی۔

بالکل غلط۔ ماضی میں کبھی اس طرح ایک جہاز بلڈنگ سے نھیں ٹکرایا اس لئے یہ کہنا بالکل غلط ھے۔اس طرز کا ٹیوب ان ٹیوب ڈیزاین منفرد ھے اور باقی طرح کی بلڈنگ سے الگ ھے۔

سپین کی بلڈنگ میں آگ مسلسل لگی زھی لیکن وہ نھیں گری۔ورلڈ ٹریڈ سینٹر کیسے گر گیا۔

سپین کی دو بلڈنگز میں آگ لگی رھی تھی اور وہ دونوں نھیں گریں کیونکہ ان کا ٹیوب ان ٹیوب ڈیزائن نھیں تھا۔ ان کے ستون یعنی پلر  لوھے اور کانکریٹ کے تھے جبکہ ورلڈ ٹریڈ سینٹر کے ستون کانکریٹ میں لپٹے ھوئے نہیں تھے۔میڈرڈ سپین بلڈنگ کے وہ تمام ستون جن کے گرد کانکریٹ نھیں تھی اسی طرح ٹوٹے جیسے کے ورلڈ ٹاورز۔

ہوائی جہاز کے ٹکرانے سے اتنی بڑی عمارت کیسے گر سکتی ھے

نیشنل انسٹئٹیوٹ آف سٹینڈرڈ اینڈ ٹیکنالوجینے اپنی رپورٹ میں یہ نھیں کہا کہ عمارتیں جہاز کی ٹکر سے گری ھیں بلکہ یہ بتایا کہ مسلسل آگ نے بلڈنگز کی بنیادیں کمزور کر دی تھیں۔(NIST)

بلڈنگ سیون کو کوئی نقصان نھیں پہنچا تھا اور اسے خود تباہ کیا گیا۔

نیچے دی گئی تصویر ملاحضہ کیجیئے۔اور پھر غور کیجیے۔

ایک وڈیو کلپ بھی ملاحضہ کیجئے جو کہ بلڈنگ سیون کا جائزہ لے رھی ھے۔

عمارت سے دھماکوں کی آوازیں آئیں جسے ثابت ھوتا ھے کہ عمارتیں خود کردہ دھماکے سے گریں۔

کانکریٹ فلورنگ لوھے اور فرنیچر کے ٹوٹنے اور بڑے بڑے لوھے کے ستون پریشر پڑنے کے باعث چٹخنے سے اونچی آواز دھماکے کے مترادف ھو سکتی ھے۔

اس کے علاوہ بھی مبشر لقمان نے کئ ایسی باتیں کی جس نے ھمیں ان کی قابلیت پر شق کرنے کا موقع دیا۔

میڈیا اینکرز کا اصل مقصد اپنے پروگرام میں قابل اور مہارت رکھنے والے اینیلسٹ کو بلا کے ان کی رائے لینا ھوتا ھے کامیڈی فراھم کرنا نہیں۔ مبشر لقمان کا پروگرام دن بدن غیک معیاری اور ان پروفیشنل ھوتا جا رھا ھے۔ اگر انھوں نے اس طرح کے پروگرام کا سلسلہ جاری رکھا تو لوگ انکا یہ شو سیاسی اور معاشی تبصرے کو جاننے کے لئے کم اور لطف اندوز ھونے کے لیئے زیادہ دیکھیں گے۔

کامران خان: متحدہ قومی موومنٹ میڈیا منسٹر

Wednesday, September 14th, 2011

آج کامران خان کے ساتھ جیو ٹی وی کا ایک بہت مشہور تجزیاتی پروگرام ھے لیکن حال ھی میں بروڈکاسٹ کیئے گئے پروگرامز ک دیکھ کر کچھ ایسے لگتا ھے جیسے کامران خان تجزیہ نگار کم اور ایم کیو ایم کے میڈیا منسٹر زیادہ ھیں۔

نیچے دی گئی ایک کلپ ملاحضہ فرمائیے۔

 

 

اس ویڈیو کو دیکھنے کے بعد یہ صاف واضع ھو جاتا ھے کہ کامران خان مصطفہ کمال کی تعریف کرتے نہیں تھکتے اور درمیانہ روی اختیار کرنے کے بجائے ام کیو ایم کی طرف داری کرنا شروع ھو گے۔

جو بات کامران خان صاحب کے روئیے سے پتا چلتی ھے وہ ھے کہ عوام کے جزبات پر کھیلتے ھوئے صرف اپنی ریٹنگ بڑھانہ ایک نہایت گری ھوئی بات ھے اور اینکر حضرات کو وہ سوالات کرنے چاھیں جو کہ اب تک نھیں اٹھائے گئے ھیں۔ جو بات کامران خان صاحب کے روئیے سے پتا چلتی ھے وہ ھے کہ عوام کے جزبات پر کھیلتے ھوئے صرف اپنی ریٹنگ بڑھانہ ایک نہایت گری ھوئی بات ھے اور اینکر حضرات کو وہ سوالات کرنے چاھیں جو کہ اب تک نھیں اٹھائے گئے ھیں۔

کامران خان صاحب سے چند سوالات پاکستان میڈیا واچ بھی کرن چاھے گی۔ کیا انہوں نے اپنے پروگام میں چٹ پٹی مصالحہ دار گپ شپ کے بجائے کبھی مندرجہ ذیل سوالات اٹھائے ھیں۔

          1. کیا اس بات کا پتا چلانا ضروری نہیں تھا کہ اسامہ بن لادن پچھلے پانچ سال میں پاکستان میں کیسے موجود تھا بجائے اس کے کہ ملکی خودمختاری کا رونا رویا جائے۔
          2. بڑے ناموں والے سیاست دانوں نے اپنے سرکاری یا سیاسی عہدے کیوں چھوڑے۔
          3. گورنر پنجاب کا قتل صرف ایک آدمی کے سر پر ھے یا اس کا قصوروار ھمارہ معاشرہ ھے جس نے ان حالات کو پنپنے کی اجازت دی۔
          4. پی۔این۔ایس مہران کے حملہ وار آخر کون تھے۔
          5. وفاقی وزیر شہباز بھٹی کا قاتل کون ھے اور کیا مسلمان نہ ھونا ھی صرف انہیں قتل کرنے کے لیے جواز کافی ھے۔
          6. کیا دھشت گردی کراچی کے بڑھتے ھوئے خراب حالات کی ذمہ دار نھیں ھے۔
          7. کیا الطاف حسین اور ذولفقار مرزا صاحبان کی الزام تراشیاں ملک کے حق میں اچھی ھیں۔

کسی بھی اینکر کا  اصل مقصد اپنی رائے نہیں بالکہ اپنے مہمان کی رائے اور پرسپیکٹؤ لینا ھوتا ھے۔ اپنی ذاتی رائے گھول کر عوام کو خبروں کے روپ میں پیش کرنا نا صرف غلط ھے بالکہ ان پروفیشنل بھی۔

اول بات تو یہ دوم یہ کہ کامران خان ایک مشہور اور پرانے اینکر پرسن ھیں۔ انہیں اس بات کا احساس ھونا چاہیے کہ عوام تک ضروری اور سچی خبر پہنچانے کی ذمہ داری ان کے کندھوں پر ھےعوام ٹاک شوز اس لئے دیکھتی ھے تاکہ  اسےاس بات کا علم ھو سکے کہ مسائل کی وجوہات اور ان کے حل کیا ھیں۔۔